سورۃ المائدہ

User Rating: 0 / 5

Star InactiveStar InactiveStar InactiveStar InactiveStar Inactive
 
درس: سورۃ المائدہ
تاریخ: 04-01-2013
بوقت: بعد از نمازِ عشاء
بمقام: جامع مسجد عثمانیہ نزد واپڈا آفس
اقبال کالونی Y بلاک سرگودھا
سورۃ المائدہ
اَلْحَمْدُ لِلهِ نَحْمَدُہُ وَنَسْتَعِينُهُ وَنَسْتَغْفِرُهُ ، وَنَعُوْذُ بِاللهِ مِنْ شُرُوْرِ أَنْفُسِنَا وَمِنْ سَيِّئَاتِ أَعْمَالِنَا. مَنْ يَّهْدِهِ اللّهُ فَلَا مُضِلَّ لَهُ ، وَمَنْ يُّضْلِلْ فَلَا هَادِيَ لَهُ ، وَنَشْهَدُ أَنْ لَا إِلٰهَ إِلَّا اللهُ وَحْدَهُ لَاشَرِيْكَ لَهُ وَنَشْهَدُ أَنَّ سَيِّدَنَا مُحَمَّدًا عَبْدُهُ وَرَسُوْلُهُ،صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَعَلَى آلِهِ وَصَحْبِهِ وَسَلَّمَ تَسْلِيْمًا كَثِيرًا اَمَّابَعْدُ. فَاَعُوْذُ بِاللهِ مِنَ الشَّيْطٰنِ الرَّجِيْمِ بِسْمِ اللّهِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِيْمِ:
يَا أَيُّهَا الَّذِيْنَ آمَنُوْا أَوْفُوْا بِالْعُقُوْدِ أُحِلَّتْ لَكُمْ بَهِيْمَةُ الْأَنْعَامِ إِلَّا مَا يُتْلٰى عَلَيْكُمْ غَيْرَ مُحِلِّي الصَّيْدِ وَأَنْتُمْ حُرُمٌ۔ إِنَّ اللَّهَ يَحْكُمُ مَا يُرِيدُ ؀
اَللّٰهُمَّ صَلِّ عَلٰى مُحَمَّدٍ وَعَلٰى آلِ مُحَمَّدٍ كَمَا صَلَّيْتَ عَلٰى إِبْرَاهِيْمَ وَعَلٰى آلِ إِبْرَاهِيْمَ إِنَّكَ حَمِيْدٌ مَجِيْدٌ۔اَللّٰهُمَّ بَارِكْ عَلٰى مُحَمَّدٍ وَعَلٰى آلِ مُحَمَّدٍ كَمَا بَارَكْتَ عَلٰى إِبْرَاهِيْمَ وَعَلٰى آلِ إِبْرَاهِيْمَ إِنَّكَ حَمِيدٌ مَجِيدٌ•
ہمارے آج کے درسِ قرآن کا عنوان ہے ”مضامینِ سورۃ المائدۃ“۔
حضرت مسیح علیہ السلام کی دعا:
حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے دستر خوان کا ذکر ہے جب انہوں نے اللہ رب العزت سے دعا مانگی تھی :
” اے اللہ! ہمیں ایسا آسمانی دستر خوان عطا فرما جو میری امت کے لئے نشانی بنے اور آئندہ آنے والی انسانیت کے لئے بھی نشانی بنے۔“
وجہ تسمیہ سورۃ :
اللہ تعا لیٰ نے ان کو دستر خوان عطا فرمایا۔ چونکہ عربی میں دسترخوان کے لئے ”مائدہ“ کا لفظ استعمال ہوتا ہے اور اس سورۃ میں بھی ”مائدۃ“ کا تذکرہ ہے اس لیے اس پوری سورۃ کا نام بھی”سورۃ المائدۃ“ ہے۔ اسے تفسیر کی زبان میں کہتے ہیں ”وجہ تسمیہ سورۃ “ کہ سورۃ کا یہ نام رکھنے کی وجہ کیا ہے؟
عوام الناس کا مزاج:
ہمارے لوگوں کا ایک مزاج ہے،بہت سے لوگ کاروبار اور بزنس کر تے ہیں اور اس میں جائز اور ناجائز کا خیال بھی نہیں کرتے لیکن ان کی خواہش ہو تی ہے کہ وہ نام اس کو شریعت والا دیں یہ بڑےتعجب کی بات ہے۔ مثلاً:
ہوٹل بنائیں گے اور اس میں جائز اور ناجائز کا خیال بھی نہیں ہو گا لیکن کوشش ہو گی کہ نام اس کا ”المائدہ“ رکھیں۔ کہاں”المائدہ“ حضرت عیسیٰ علیہ السلام کا جو خدا سے مانگا اور آسمان سے اترا۔ اور آپ ہو ٹل میں جا ئز اور ناجائز کا خیال بھی نہ رکھیں اور پھر بھی اپنے ہو ٹل کا نام”المائدہ“رکھیں یہ ہماری سوچ سے باہر ہے۔
دین برائے دنیا:
ہمارے ایک قریبی دوست ہیں جو مجھ سے بیعت بھی ہے، ان کے بعض دوست کراچی میں ہیں اور بعض ریا ض میں ہیں، انہوں نے آپس میں مل کر یہ کوشش کی کہ ہم ”ٹریولز ایجنسی“ بنائیں۔ تو اس نے کہاجی ہم نے 12 نام دیے ہیں اسی میں دو نام ملیں ہیں ان میں سے ایک نام ہے ”تھا نوی ایسو سی ایشن“ اور ایک نام اور ملاہے [جس کا نام مجھے اب یاد نہیں رہا ]
تو میں نے ان سے کہا کہ تھا نوی ایسوسی ایشن نام نہ رکھیں جو دوسرا نام ہے وہ رکھ لیں!! میری رائے یہ ہے۔ کیونکہ حکیم الامت حضرت تھانوی رحمہ اللہ کانام کاروبار کیلئے استعمال نہ کریں اس کو دین کے لیے ہی رہنے دیں۔
اکابر کا مزاج :
ہمارے بعض اکا برجیسے حضرت تھانوی رحمہ اللہ کا مزاج یہ ہے کہ اگر آپ دکان پر جائیں سودا خریدیں تو بحیثیت عالم یہ نہ کہیں مجھ سے بھی اتنے پیسے لیں گے ؟؟ گویا کہ آپ اپنا علم بیچ کر سودا لینا چاہتے ہیں۔ میں اپنی بات کرتاہوں کہ دکان پر جاؤں الماری کی قیمت 12500روپے کی ہے۔ اب میں ان سے کہوں کہ مجھ سے بھی آپ 12500روپے لیں گے؟اس کا مطلب ہے کہ چونکہ میں آپ کا مولوی ہوں،عالم ہوں،امام ہوں، میرے علم کی قیمت یہ ہےکہ 2000روپے کم کردیں۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ مجھے اپنے علم کی قیمت کا احساس نہیں ہے۔
علم کی اہمیت پیدا کریں :
امام شافعی رحمہ اللہ کا مزاج یہ تھا کہ جب وہ کسی حجام سے حجامت کروانے کےلئے تشریف لے جاتے تو عام آدمیوں سے دوتین گنا زیادہ مزدوری دیتے ، مزدوری تو مثلاً دس روپےہے آپ تیس روپے دیتے۔ ان سے پوچھا گیا کہ مزدوری دس روپے ہے آپ تیس کیوں دیتے ہیں؟ فرمایا:اس سے حجام کے دل میں علم کی قیمت پیدا ہوگی کہ علماء بہت اچھے لوگ ہیں۔
لمحہ فکریہ!!
ایک طرف مزاج یہ ہے اور ایک طرف مزاج ہمارا ہے۔ اب بتاؤ ؟ امت برباد تو ہو گی ناں [میں اپنی بات کرتا ہوں با قی علماء کی نہیں ] اگر میں اپنے علم کو پیسوں کے لئے استعمال کروں گا تو میرے علم کی قیمت ختم ہو گی اور اس علم کو بے وقعت میں نے کیا ہے آ پ نے نہیں کیا، خراب تو آپ کو میں نےکیا ہے اس لیے اللہ تعالیٰ ہم سب کی اصلاح فرمائے۔ [آمین۔سامعین]
کاروبار میں کوشش کریں، کاروباری نام ہی رکھیں۔ اس میں دینی نام رکھنے کی کوئی ضرورت نہیں ہے ،یا تو اس نیت سے رکھیں کہ میں نے خالص دین کا کام کرنا ہے تو بہت اچھی بات ہے۔
دین کی بدنامی کا سبب:
بسا اوقات ہماری وجہ سے دین بہت بدنام ہو تاہے ہماری وجہ سے ،چاہیے تو یہ کہ آدمی دین کا کام کرے ،اگردین کا کام نہ کر سکے تو کم ازکم دین کو بدنام کرنے کا ذریعہ تو نہ بنے۔
امام بخاری رحمہ اللہ کی احتیاط:
حضرت امام بخاری رحمہ اللہ کو” امیر المؤمنین فی الحدیث“ کہتے ہیں۔ بہت بڑےمحدث تھے دنیا ئے حدیث میں ان کا نام بہت بلند ہے۔ ان کی سوانح حیات میں ایک واقعہ مذکور ہے کہ حضرت امام بخاری رحمہ اللہ ایک دفعہ کشتی میں سفر کر رہے تھے ، اس دوران کسی مسافر سے دوستی لگ گئی باتوں باتوں میں حضرت نے ان کو یہ بھی بتایا دیا کہ میری جیب میں اشرفیوں کی تھیلی ہے جس میں اتنی رقم موجود ہے۔
تھوڑا سا سفر گزرا تو اسی شخص نے کہا میری ایک تھیلی چوری ہو گئی ہے جس میں اتنے سونے کے سکے موجود ہیں ،اب ظاہر ہے حضرت امام بخاری رحمہ اللہ نے بتا تو دیا تھا جو نہی اس نے اعلان کیا تو تلاشی شروع ہو گئی ، حضرت امام بخاری رحمہ اللہ نے چپکے سے اس تھیلی کو نکا لا اور دریا میں گرادیا تلاشی لی گئی اب کسی سے بھی سونا برآمدنہیں ہوا جب کنارے پر پہنچے اورجانے لگے تو اس نے الگ ہو کر امام بخاری رحمہ اللہ سے پوچھا کہ صوفی صاحب آپ کی جیب میں تو پیسے تھے آپ نے مجھے خود بتایا تھا یا آپ نے جھو ٹ بولا تھا آپ کے پاس نہیں تھے اگر تھے تو وہ کدھر گئے؟ حضرت امام بخاری رحمہ اللہ نے جواب دیا اور فرمایا: پوری امت مجھ پر اعتماد کرتی ہے کہ حدیث کے معاملے میں جھوٹ نہیں بولتا ، ہو سکتا ہے میں صفائی دیتا اور چوری ثابت نہ ہو تی لیکن مجھ پر چوری کا الزام تو لگ ہی جاتا ،میں نے خود کو چوری کے الزام سے بھی محفوظ رکھا ہے تاکہ امت میری احادیث پر اعتماد کرے۔ جب اس طرح آدمی دین کا کام کرتاہے تو اللہ تعالیٰ اس کے کام میں اس کے علوم میں بہت برکتیں عطافرماتاہے۔
سورۃ کے مکی اورمدنی ہونے میں فرق :
بہر حال میں کہ رہا تھا ”سورۃ المائدہ“ ہے جس میں 16 رکوع ہیں اور 120آیات ہیں اور سورۃ مدنی ہے۔ مدنی اور مکی میں فرق ہے۔ جو سورتیں حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے مکہ سے ہجرت فرمانے کے بعد اتریں انہیں مدنی کہتےہیں اور جو سورتیں اس سے پہلے اتریں انہیں مکی کہتے ہیں۔
سورۃ المائدہ مدنی کیسے ہو سکتی ہے ؟
سورۃ کے متعلق اگرچہ بہت سے مفسرین کا خیا ل ہے کہ بہت ساری اس کی آیات حدیبیہ کے مقام پر اتری ہیں ، بہت ساری حجۃ الوداع کے موقع پر اتری ہیں اوربہت ساری فتح مکہ کے موقع پر اتری ہیں۔ فتح مکہ تو مکہ ہے حجۃ الوداع تو مکہ میں ہے مدینہ میں تو نہیں پھر اس کو مدنی کیوں کہتے ہیں ؟ اس لئیے کہ سورۃ کی اکثر آیات کا نزول رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے مکہ سے مدینہ ہجرت کے سفر کے بعد اتری ہیں۔ حدیث مبارک میں خود رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا
”المائدة من آخر القرآن تنزيلا فأحلوا حلالها وحرموا حرامها“
)تفسیر روح المعانی:ج6ص47(
آخری سورتوں میں سے ایک سورۃ ”سورۃ المائدہ“ہے۔ جس چیز کو حلال بتادیا اس کو حلال سمجھو اور جس کو حرام بتادیا اس کو حرام سمجھو۔تو یہ سورۃحلال اور حرام کو بیان کرنےمیں بڑی اہمیت کی حامل ہے۔
ایک مسئلہ …… متعدد آیات:
ایساکیوں فرمایا ؟بعض اوقات ایک مسئلے پر آیت پہلے اتری ہے اسی مسئلے پر آیت بعد میں اتری ہے یہ جتنی آیات کا شان نزول ہے تلاوت ہم سب آیات کی کرتے ہیں لیکن عمل ان آیا ت پر کرتے ہیں جو آخرمیں اتری ہوں۔ اسی لئے حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:یہ سورۃ آخری سورتوں میں سے ہے جس کو اللہ تعالیٰ اس سورۃ میں حلال فرمائے وہ حلال ہی رہے گی اور جس کو حرام فرمائے وہ حرام ہی رہے گی ،اب اس نے منسوخ نہیں ہونا کیونکہ یہ آخری دور کی سورۃ ہے۔
شراب اور جوئے کی حرمت :
میں اس کی چھوٹی سی مثال دیتاہوں۔ اس میں آیت کریمہ ہے
”يٰاَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا إِنَّمَا الْخَمْرُ وَالْمَيْسِرُ وَالْأَنْصَابُ وَالْأَزْلَامُ رِجْسٌ مِنْ عَمَلِ الشَّيْطَانِ فَاجْتَنِبُوهُ لَعَلَّكُمْ تُفْلِحُونَ“
)سورۃ المائدہ:90(
یہ شراب ہے، یہ جوا ہے، یہ جوے کے تیر ہیں۔
جوئے کے تیر:
تیروں کے ساتھ جوا کیسے ہوتاتھا؟وہ اس طرح کہ دس آدمی دس دس روپے ڈالتے اور اسی سے کوئی چیز خریدلیتے۔ یعنی ایک اونٹ خریدا ہے ،بکری خریدی ہے۔وہ دس ہزار کی ہوتی یا کتنے کی بھی ہوتی دس آدمی برابر پیسے ڈالتے اور وہ خرید لیتے ،اب اونٹ کویا بکری کو جب تقسیم کرنا ہے تو وہ اس طرح کرتے تھےکہ سات تیر رکھ لیتے، ایک تیر پر ایک حصہ ہے ایک تیر پر دو ہیں ایک پر تین ہیں کچھ تیر خالی ہیں تو جس کا جو تیر نکلے گا اس کو وہی حصہ ملے گا جب خریدا سب نے ملکر ہے تو حصہ سب کا ہے یہ جوئے ہی کی ایک قسم تھی جس کو اللہ تعالیٰ نے اس آیت میں حرام کردیا کہ جو ئے سے بچو،شراب سے بچو ان کاموں سے۔
شراب نقصان دہ چیز ہے :
اب شراب کے بارے میں تو تین آیتیں نازل ہوئی ہیں پہلی آیت کون سی ہے؟
”يَسْأَلُونَكَ عَنِ الْخَمْرِ وَالْمَيْسِرِ قُلْ فِيهِمَا إِثْمٌ كَبِيرٌ وَمَنَافِعُ لِلنَّاسِ وَإِثْمُهُمَا أَكْبَرُ مِنْ نَفْعِهِمَا“
)سورۃ البقرہ:219(
آپ سےشراب کے بارے میں پو چھتے ہیں۔آپ فرمادیجیے:شراب میں فائدہ بھی ہے نقصان بھی ہے لیکن نقصان اس کا نفع سے زیادہ ہے۔ اب دیکھوحرام تو نہیں فرمایا۔
شراب نشہ آور چیز ہے :
اور دوسری آیت اتری ”يٰاَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا لَا تَقْرَبُوا الصَّلَاةَ وَأَنْتُمْ سُكَارَىٰ حَتَّى تَعْلَمُوا مَا تَقُولُونَ“
)سورۃ النساء:43(
نشے کی حالت میں ہو تو نماز نہ پڑھا کرو نشہ اتر جائے تو نماز پڑھا کرو۔شراب کوحرام اب بھی نہیں فرمایا۔
شراب قطعی حرام ہے :
اور یہ تیسری آیت جب نازل ہوئی ”يٰاَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا إِنَّمَا الْخَمْرُ وَالْمَيْسِرُ وَالْأَنْصَابُ وَالْأَزْلَامُ رِجْسٌ مِنْ عَمَلِ الشَّيْطَانِ فَاجْتَنِبُوهُ لَعَلَّكُمْ تُفْلِحُونَ “
)سورۃ المائدہ:90(
اب شراب حرام ہوئی ہے اب اس کے بعد ذرہ برابر بھی شراب استعمال نہیں کی جاسکتی۔تو مسئلہ شراب پر تو تین قسم کی آیتیں ہیں لیکن آخری یہ ہے۔
مسئلہ قرآن و حدیث میں موجود ہو ……پھر بھی :
اس سے ایک بہت بڑا مسئلہ حل ہوا،ہمیشہ لوگ کہتے ہیں اس مسئلے پر قرآن موجود ہے،اس مسئلے پر حدیث موجود ہے۔ اس سے ہم لوگ تو جلدی متاثر ہوتے ہیں کہ فلاں مسئلہ حدیث میں ہے فلاں مسئلہ قرآن میں ہے۔ اس سے متاثر نہ ہوا کریں جب بندہ کہے فلاں مسئلہ حدیث میں ہے تودیکھنا یہ ہے کہ اس حدیث کے مدمقابل کوئی اور حدیث ہے یا نہیں یہ بھی دیکھنا چاہیے پھر یہ کہ دونوں حدیثوں میں سے پہلے دور کی کون سی ہے اور بعد کے دور کے کون سی ہے عمل تو تب ہوگا۔ ہم اسی سے پر یشان ہو جاتےہیں۔
ترک رفع الیدین ……اختلاف روایات:
اگر کوئی کہےآپ نماز میں رفع یدین کیوں نہیں کرتے حدیث میں ہے ؟ آپ شروع کردیتے ہیں۔ بھائی یہ دیکھو رفع یدین کرنے کی حدیث ہے تو آیا نہ کرنے کی بھی حدیث موجود ہے یا نہیں اگر نہ کرنے کی حدیث بھی ہو ،کرنے کی بھی ہو اب کیا دیکھیں گے بعد والی کون سی ہے۔کرنے والی یا نہ کرنے والی اگر کرنے والی بعد کی ہے تو کرنا چاہیے نہ کرنے والی بعد کی ہے تو پھر نہیں کرنا چاہیے۔
اب پورا مسئلہ چونکہ علم میں نہیں ہوتا ہم صرف ایک بخاری کی حدیث دیکھتے ہیں اور اس پر کہتے ہیں بخاری نے کہا۔ اب اگرکوئی بندہ کہہ دے قرآن میں ہے کہ شراب پی لو جب نشہ اترجائے نماز پڑھ لو قرآن میں ہے تو کیا شروع کردیں گے پینا ؟ [نہیں۔ سامعین ]تو صحیح بخاری میں حدیث کا ہونا اس بات کی دلیل نہیں ہے کہ اس پر عمل کرنا بھی ضروری ہے۔
صحتِ سند؛ صحتِ عمل کی دلیل نہیں :
اس کو علماء کی زبان میں کہتے ہیں: صحتِ سند؛ صحتِ عمل کی دلیل نہیں ہے۔ اگر حدیث کوصحیح سند سے لیا ہے اس کامعنی یہ نہیں کہ اس پر عمل کرنا بھی صحیح ہے۔ بعض اوقات سند صحیح ہوتی ہے عمل کرنا صحیح نہیں ہوتا۔
کیا ”ران“ ستر میں شامل ہے ؟:
حضرت امام بخاری رحمہ اللہ ایک باب قائم کرتے ہیں:” بَاب مَا يُذْكَرُ فِي الْفَخِذِ“پہلے حدیث لائے ”الْفَخِذُ عَوْرَةٌ “نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ران ستر ہے۔پھر دوسری حدیث لائےکہ حضرت انس رضی اللہ عنہ نے نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ سفر کیا اس میں ہے کہ حضرت انس رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں: حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے گٹنے سے میرا گھٹنا ملا تونبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا جو تہبند مبارک تھا وہ تھوڑا اترا تو میں ران کودیکھتا رہا۔
اب بتاؤ؟ ادھر حضور صلی اللہ علیہ وسلم ستر فرمارہے ہیں ادھرستر دیکھا رہے ہیں۔ اب اگر ستر ہے تو دکھا یا کیوں؟ اگر دکھایا ہے تو سترکیوں؟
فقہاء؛ گمراہی سے بچاتے ہیں:
اب اس سے ایک نیا طبقہ پیداہوا منکرین حدیث ، وہ کہتے ہیں ہم حدیث کو نہیں مانتےاور فقہاء کاکام کیا ہے ؟فقیہ کاکام ہے وہ ایسی جلدی یہ نہیں کہتا کہ ہم دونوں کو نہیں مانتے وہ یہ دیکھتا ہے کہ اس میں حدیث پہلی کون سی ہے بعد کی کون سی ہے ، احتیاط کس میں ہے کس میں احتیاط نہیں ہے۔
امام بخاری کا فیصلہ:
خود امام بخاری رحمہ اللہ فرماتے ہیں:”حَدِيثُ أَنَسٍ أَسْنَدُ” حضرت انس رضی اللہ عنہ کی حدیث کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی ران کودیکھا تھا اس حدیث کی سند بہت مضبوط ہے۔ لیکن دوسری میں فرمایا :”حَدِيثُ جَرْهَدٍ أَحْوَطُ“سند اس کی مضبوط ہے عمل کرنا اس پہ ٹھیک ہے۔ یہ امام بخاری رحمہ اللہ کا خود کافیصلہ ہے۔
بخاری کا نام لے کر دھوکہ دینا:
میں آپ کو بتاؤں آپ یقین فرمائیں کون کونسا رونا روئیں اور کس کس فتنے کا تعاقب کریں۔ میں دبئی میں ایک مسجد میں ایسے بیٹھا تھا نماز پڑھنےکے بعد میں نے وہاں سے ایک کتاب اٹھائی اس کا نام تھا ”المختصر من صحیح البخاری“صحیح بخاری کا خلاصہ۔ میں نے اسی باب کو کھولا، مجھے پتہ تھا کہ یہاں اس نے گڑ بڑ کرنا ہےآپ کو تو نہیں پتہ ناں آپ یقین فرمائیں اس کا عنوان تھا بھی یہی کہ [ران ستر ہے یا نہیں ] اور نیچے صرف حضرت انس رضی اللہ عنہ کی حدیث نقل کی ہے کہ نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم کاران کھل گیااورمیں اسےدیکھتا رہا اور دوسری حدیث کا ذکر بھی نہیں کیا اورامام بخاری رحمہ اللہ کے فیصلے کا ذکر بھی نہیں کیا۔
مجرم نام نہاد” مولوی“ ہے :
اب اگر دبئی ائیر پورٹ میں یا دبئی سا حل پر کوئی نوجوان نیکر پہن کے پھرے اور کہے جی حضورصلی اللہ علیہ وسلم کی سنت ہے۔ میں نے دیکھا دیا تو کیا حرج ہے۔ تو بتاؤ اس کو کیا جواب دو گے؟اس نوجوان کا قصور تونہیں ہے ،قصور تو اس مصنف کا ہے۔ نوجوان تو ٹھیک ہے ان کاکیا ہے ،جرم تو اس مصنف کا ہے جس نے غلط باتیں امت کے سامنے پیش کی ہیں۔ میں اس لیے گزارش کر رہا تھاکہ یہ سورۃ آخری سورۃ ہے۔اب اس کا مطلب کیا ہے؟ کہ اس میں جو احکام ہیں وہ منسوخ نہیں ہوں گے۔اللہ تعالیٰ ہمیں یہ بات سمجھنے کی توفیق عطا فرمائے۔
دھوکہ بازوں سے بچنے کا گُر:
میں چھوٹے چھوٹے،تھوڑے تھوڑے وقت میں اتنے اصول آپ کی خدمت پیش کرتاہوں اگر آپ ان کو اپنے ذہن میں بٹھائیں توکوئی بندہ آپ کو اللہ کی قسم اٹھاکے کہتاہوں گمراہ نہیں کر سکتا۔کیونکہ آپ ایک مسئلے پر عمل کرتے ہیں اور اسی کے مقابلے میں کوئی آپ کے سامنے حدیث پیش کرے تو آپ کیا پو چھو گے؟ کہ اس کے مقابلے میں کوئی حدیث ہے یا نہیں وہ کہے گا، نہیں۔ تو آپ کہہ دیں مولانا صاحب سے پوچھ لیتے ہیں کہ حدیث ہےیا نہیں؟اگرکہے اس کے مقابلے میں حدیث ہے۔ تو پھر یہ دیکھیں گے کہ وہ بات پہلے کی ہے یا بعد کی؟آپ کہیں یار یہ فیصلہ کر پھر تیری بات مان لیں گے ،دوبارہ کبھی آپ کی دکان پر نہیں آئیں گے۔
ورنہ فتنہ پھیل جائے گا:
اگر آپ نے اس طرح نہ کیا بلکہ اس کی بات کو مان لیا تو پھر کیا کریں گے،ایک پمفلٹ دے گا کہ یہ اپنی بیوی کو بھی پڑھوانا۔ اب کیا ہوگا؟ پہلے ایک تھا اب دو ہیں ،پھر عورتیں بعض بہت تیز ہوتی ہیں وہ پورے محلے میں بات چلاتی ہیں ، پھر ہمیں بعد میں فون کریں گے مولانا صاحب ہمیں آپ کے بیان کا وقت چاہیے ہمارےمحلے میں فتنہ پیدا ہوگیاہے۔ جب خود آئیں تو ضرورت کیاہے اور جب فتنہ پیدا ہو جائے تو پھر دوڑے ہیں ،پھر وقت نہیں ملتا پھر ناراض بھی ہوتے ہیں۔
اِکمالِ دین اور اِتمامِ نعمت کا فلسفہ:
”الْيَوْمَ أَكْمَلْتُ لَكُمْ دِينَكُمْ وَأَتْمَمْتُ عَلَيْكُمْ نِعْمَتِي وَرَضِيتُ لَكُمُ الْإِسْلَامَ دِينًا“
یہ آیت نازل ہوئی ہے حجۃ الوداع کے موقع پر جب نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم کی زندگی کا آخری حج تھا اوروہ پہلا بھی تھا اور آخری بھی ،آخری اس لئے کہتے ہیں کہ اس کے بعد حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے حج نہیں کیا۔اس موقع پر یہ آیت کریمہ نازل ہوئی اور آیت اتنی اہم ہے کہ ایک یہودی نے حضرت عمر رضی اللہ عنہ سے عرض کیا اےامیر المومنین! یہ اتنی اہم آیت ہے اگر یہ آیت ہماری تورات میں نازل ہوتی توجس دن یہ آیت نازل ہوتی ہم اس دن کو بطور عید مناتے۔ اتنی اہم آیت اللہ تعالیٰ نے ہمیں عطافرمائی ہے۔
آیت مبارکہ کا خلاصہ:
آیت کا خلاصہ کیا ہے آج کے دن ہم نے تمہارا دین کامل کردیا ہے ،تمہاری نعمتیں پوری کردیں ہیں اور تمہارے دین کو بطور اسلام تمہارے لئے پسند کیا ہے کامل دین کرکے خدانے ہمارے حوالے کردیا۔
اِکمال اور اِتمام میں فرق:
اس میں دو لفظ ہیں ایک ہے ”أَكْمَلْتُ“اورایک ہے ”أَتْمَمْتُ“۔ اکمال اور اتمام میں کیا فرق ہے؟ عام بندہ نہیں سمجھ سکتا۔وہ کہتا ہےجب مکمل کردیا جاتاہے توپورا بھی تو کردیا جاتا ہے پورا اور مکمل میں کیا فرق ہے ؟
اب فرق سمجھیں۔ جب کسی چیز کو مکمل کردیں تو اسے”اکمال “کہتے ہیں اور جب اس کے بعد کسی چیز کی ضرورت نہ رہے اسے ”اتمام “کہتے ہیں۔ بندہ کہتا ہے میں نے آپ کو اتنا کچھ دے دیا ہے کہ اس کے بعد تجھےضرورت ہی نہیں رہی۔ یہ جو میں نے اتنا کچھ دےدیاہے یہ ”اکمال “ہے۔اور اس کے بعدتجھے ضرورت ہی نہیں رہی یہ ”اتمام“ہے۔ جو تمہیں چاہیے تھا میں نے دیا ہے اب تمہیں کسی درپہ جانے کی ضرورت نہیں رہی۔
دین کامل ہے توفقہ کہاں سے آئی؟
بعض لوگ اس آیت کا مفہوم غلط یہاں بیان کرتے ہیں اس کو عربی زبان میں کہتے ہیں:
”کلمۃ حق ارید بہا الباطل“
کہ لفظ ٹھیک ہوتا ہے اور معنی غلط ہوتا ہے۔ بعض لوگ یوں کہتے ہیں جب دین کامل ہوگیا اس وقت فقہ تھی؟ توبعد میں آئی ناں:جب دین کامل ہوگیا اس وقت امام ابوحنیفہ رحمہ اللہ تھے ؟نہیں توبعد میں آئے ناں، یہ دیکھو دین کے کامل ہونے کے خلاف ہےاور ہمیں شک پڑ جاتا ہے کہ بات تو ٹھیک کہہ رہے ہیں۔
مشکل وسوسے کا آسان جواب:
آپ پریشان نہ ہوں اس کا ایک آسان جواب ہے۔ اللہ تعالیٰ فرماتےہیں : ”الْيَوْمَ“ ہم نے آج کے دن دین مکمل کیا۔ ان سے پوچھو جس دن یہ آیت نازل ہوئی اس کے بعد جو کچھ آیا وہ دین میں اضافہ ہے ؟یہ آیت کب نازل ہوئی؟ وہ کہیں گے حجۃ الوداع کے موقع پر۔ پوچھو حجۃ الوداع کے موقع کے بعد نبی کریم صلی اللہ تعالی وسلم کتنے دن زندہ رہے؟
ایک قول ہے 85 دن، تو وہ جو 85 دن تھے وہ دین میں اضافہ ہوا ناں ؟ کہیں گے وہ تو اضافہ نہیں ہے۔ کیو ں نہیں ؟ جب ”الْيَوْمَ“کہہ رہا ہے آج دین کامل ہو گیاہے۔ اس کے بعدپھر آخری آیت قرآن کی یہ تو نہیں ہے۔
سب سےآخری نازل شدہ آیت:
آخری آیت ہے ”وَاتَّقُوا يَوْمًا تُرْجَعُونَ فِيهِ إِلَى اللَّهِ ثُمَّ تُوَفَّى كُلُّ نَفْسٍ مَا كَسَبَتْ وَهُمْ لَا يُظْلَمُونَ“
)سورۃالبقرہ:281(
یہ آخری آیت ہے تو پھر وہ آیت بھی دین میں اضافہ ہوا ہے ،کیونکہ دین کے کامل ہو نےکےبعدآئی ہے۔پھر کہیں گے ”الْيَوْمَکا“مطلب یہ نہیں۔ ہم نے کہا کہ ”أَكْمَلْتُ“ کامطلب بھی یہ نہیں۔ تو نے ”الْيَوْمَ“ کی تاویل کی ہے،ہم نے ”أَكْمَلْتُ“ کی تاویل کی ہے تو مکمل ہو نے کا معنی نہیں سمجھااگر ہم الْيَوْمَکا معنی نہیں سمجھے۔تاویل کرنی پڑ گئی ناں[جی ہاں۔سامعین]
جنت اور نابینا افراد:
حکیم الامت مولانا اشرف علی تھا نوی رحمہ اللہ کے پاس ایک آدمی آیا اور تھا آنکھوں سے نابینااور غیر مقلد بھی تھا ، دل کا بھی نابینا اور آنکھوں کا بھی نابینا ،دونوں نعمتوں سے محروم، بصارت بھی نہیں ہے، بصیرت بھی نہیں ہے۔
حکیم الامت مولانا اشرف علی تھانوی رحمہ اللہ سے عرض کرنے لگا میں نے آپ سے ایک مسئلے پر بحث کرنی ہے حضرت تھا نوی رحمہ اللہ نے فرمایا :کہ میں نے بحث نہیں کرنی ،اس نے کہا کہ نہیں جی میں نے کرنی ہے حضرت نےفرمایا :میں نے نہیں کرنی ،اس نے کہا: اجی۔۔ کیوں؟
فرمایا: اس لئے کہ تجھ سے بحث کرنے کا فائدہ ہی نہیں ، اس نے پوچھا فائدہ کیوں نہیں ہے؟ فرمایا :میں اگر بحث کروں گا توتجھے مسئلہ سمجھ آجائے گا ؟ تواس نے کہا جی آجائے گا۔حضرت نے فرمایا:پھر مان لو گے؟ اس نے کہا جی مان لوں گا۔
حضرت نے فرمایا: مان لوگے تو پھرکیا ہوگا ؟اس نے کہا ٹھیک ہوجاوں گا۔ فرمایا :ٹھیک ہوجائے گا تو،تو پھر کیا ہوگا؟ اس نے کہا جنت میں جاؤں گا۔ حضرت نےفرمایا :تجھے مسئلہ سمجھ آبھی جائے ، تو مان بھی لے ،توعمل بھی کرلے ،تو جنت میں پھر بھی نہیں جا سکتا۔ پھرتجھ سے بحث کا فائدہ ؟ اس نے کہا : کہاں لکھا ہے ؟ فرمایا: قرآن میں لکھاہے تو جنت میں نہیں جاسکتا۔ اس نے کہا قرآن میں کہاں لکھا ہے؟ فرمایا قرآن کریم میں ہے
” وَمَنْ كَانَ فِي هَذِهِ أَعْمَىٰ فَهُوَ فِي الْآخِرَةِ أَعْمَىٰ “
)سورۃ الاسراء:72(
جو دنیا میں اندھا ہے وہ قیامت میں بھی اندھا ہوگا۔ تو جنت میں اندھا تو کوئی نہیں جائے گا۔ تجھے سمجھا نے کا کیا فائدہ ؟کہتا ہے:جی اس آیت کا مطلب یہ نہیں ہے۔ فرمایا :تاویل نہ کر جب قرآن کہہ رہا ہےجو دنیا میں اندھا ہے وہ آخرت میں بھی اندھاہوگا۔ توں یہاں بھی اندھا ہے تو نے وہاں بھی اندھا ہو کر ہی اٹھنا ہے۔ تو اندھا بندہ تو جنت میں نہیں جاتا۔ تجھے سمجھانے کا کیا فائدہ ؟کہتا ہے :یہ مطلب نہیں۔
فرمایا:مطلب نہ بیان کر، امام اعظم ابو حنیفہ رحمہ اللہ فر مائیں کہ اس حدیث کا مطلب یہ ہے ،تو تم کہتے ہو تاویل نہیں کرنی چاہیےاور جب توں کہے کہ آیت کا مطلب یہ ہے تو تیری دلیل کیسے مانیں۔ ؟حضرت تھا نوی رحمہ اللہ فرمانے لگے آیت میں تاویل نہ کر یں تو تیرا جنت میں جانا ثابت نہیں ہو سکتا۔اس نے کہا: جی مجھے بات سمجھ آگئی۔
الیوم سے مراد کون سا دن ہے ؟
تو ”الْيَوْمَ“ میں آج کے دن سے مراد وہ دن نہیں ہے جب آیت نازل ہوئی ہے ،بلکہ اس سے مراد رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا زمانہ ہے۔ لوگ کہتے ہیں آج نوجوان بہت خراب ہو گئے ہیں۔اس کا کیا مطلب کل ٹھیک ہو جائیں گے؟ [نہیں۔ سامعین] آج سے مراد کیا ہے ؟آج کا دور آج کا زمانہ۔ ہم نے کہا جیسے ”الْيَوْمَ“ سے مراد خاص دن نہیں ہےبلکہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کا زمانہ ہے۔
دین کےکامل ہونے سے کیا مرادہے ؟
اسی طرح”أَكْمَلْتُ“ سے مراد وہ نہیں جو تم نے سمجھا بلکہ”أَكْمَلْتُ“ سے مراد یہ ہے کہ جو قرآن اللہ تعالیٰ نے دیا دین کامل ہے ،اس کی شرح حدیث دین کامل ہے،اس قرآن نے اصول دیے دین کامل ہے،جو مسائل دیے وہ دین کامل ہےان اصولوں سے قیامت تک آنے والے مسائل کو نکالنے کیلئے جو مجتہد دیے دین کامل ہےاور جو مسائل نکالیں گے وہ دین کامل ہے۔ دین کامل کا مطلب یہ ہے : تمہیں قرآن بھی دیا ہے ،تمہیں حدیث بھی دی ہے ،جو مسائل اس وقت چاہئے تھے وہ بھی دیے ہیں،وہ جو قیامت تک آنے والے مسائل چاہیے تھے وہ بھی دیے ہیں، اس کےلئے اصول بھی دیے ہیں اور اصولوں کی روشنی میں مسائل نکالنے والے مجتہد بھی دیے ہیں۔ سارا کچھ لوگے تو دین کامل بنے گا۔ور نہ دین کامل بن ہی نہیں سکتا۔
ایک علمی نکتہ:
اس میں ایک چھوٹا سا نکتہ اوربھی سمجھ لیں۔ مکہ مکرمہ میں قرآن کریم نے اعلان فرمایا
قُلْ يَا أَيُّهَا الْكَافِرُونَ ؀ لَا أَعْبُدُ مَا تَعْبُدُونَ؀ وَلَا أَنْتُمْ عَابِدُونَ مَا أَعْبُدُ ؀ وَلَا أَنَا عَابِدٌ مَا عَبَدْتُمْ ؀ وَلَا أَنْتُمْ عَابِدُونَ مَا أَعْبُدُ ؀ لَكُمْ دِينُكُمْ وَلِيَ دِينِ ؀
)سورۃالکافرون(
اصل لفظ کیا ہے” لَكُمْ دِينُكُمْ وَلِيَ دِينِی“ اصل یہ ہے۔ وہ تو ایک عربی کا قاعدہ ہے ناں یا متکلم حذف ہو جاتی ہے اور جب وقف کرتے ہیں تو ”ن“ساکن ہوجاتا ہے۔ اصل میں کیا ہے” لَكُمْ دِينُكُمْ وَلِيَ دِينِی“ مکہ والو ، مشرکو تمہارے لئے تمہارا دین ، مجھ محمد کے لئے میرا دین ،اگر تم میرا دین قبول نہیں کرتے تومیں تمہارا دین قبول نہیں کرسکتا۔
دین نبوی اور دین صحابہ:
دین کی نسبت مکہ مکرمہ میں حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف فرمائی ہے اور جب یہ آیت مدینہ میں نازل ہوئی فرمایا:
” الْيَوْمَ أَكْمَلْتُ لَكُمْ دِينَكُمْ“
یہ خطاب صحابہ کوفرمایا ہے۔ جب مکہ مکرمہ ہے تو ”دینی“ فرمایا اور جب مدینہ ہے تو ”دِينَكُمْ“ فرمایا۔جب دین مکہ میں تھا تو اسےدین محمد کہتے تھے اور رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نےوہ دین صحابہ کے حوالے کیا تو جب نبی دنیا سے گئے ہیں انہیں دین صحابہ کہتے ہیں۔ تو پہلے”دینی“تھا اب ”دِينُكُمْ“ ہے۔ ”دینی“بنتا ہی وہ ہے جو ”دینکم“ ہو۔
اب اگر یہ پوچھنا ہو کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کا دین ہے یا نہیں تو کون بتائیں گے ؟[صحابہ۔ سامعین ]صحابہ نہ بتائیں تو حضور کا دین ثابت ہی نہیں ہو سکتا۔ اس لئے مکہ میں ”دینی“ فرمایا اور مدینہ میں ”دِينُكُم“ فرمایا۔ اس لیے ہمارا نام کیاہے؟ [اہل السنت والجماعت۔ سامعین ]سنت ہوتی ہی وہ ہے جو جماعت صحابہ دے جماعت صحابہ نہ ہو تو سنت بنتی ہی نہیں۔
آیت وضواور وضو کے فرائض:
”يٰاَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا إِذَا قُمْتُمْ إِلَى الصَّلَاةِ فَاغْسِلُوا وُجُوهَكُمْ وَأَيْدِيَكُمْ إِلَى الْمَرَافِقِ “
اس آیت میں اللہ تعالیٰ نے حکم فرمایا :جب نماز کا ارادہ کرلو تو اس وقت اپنے چہرے کو بھی دھولو، اپنے ہاتھوں کو بھی دھولو اور سرکامسح بھی کرلو اوراپنے پاؤں کوبھی دھولو،تو وضو کے فرض کتنے ہوگئے۔ [چار۔سامعین] اب قرآن میں نہیں لکھا ہوا کہ وضو کے فرض چار ہیں۔
قرآن میں کیا لکھا ہے؟ جب نماز پڑھنے لگو تو چہرے کو دھولو،ہاتھ کو دھولو، سرکا مسح کرو ،پاؤں کودھولو۔ اب چار لکھا ہوا تو نہیں ہے فقہاء کے قبروں پر اللہ تعالیٰ کروڑوں رحمتیں نازل فرمائے وہ آیت کاحوالہ نہیں دیتے ،بس اتنا کہتے ہیں کہ وضو کے فرض چارہیں۔ لوگ کہتے ہیں جی کتھے لکھیا وے؟ [جی کہاں لکھا ہوا ہے] قرآن میں لکھا ہے۔ کہتے ہیں قرآن میں چارتو نہیں لکھا ہوا۔او بھائی جو اندھا قرآن سمجھتا نہیں ہے وہ کیسے سمجھے گا کہ چار ہیں ،ان کی آسانی کے لئے فقہاء نے سیدھی بات فرمادی کہ وضو کے فرض کتنے ہیں ؟[چار۔سامعین]
نماز ِجنازہ کی نیت :
مجھ سے ایک ساتھی کہنے لگا ،وہ تھا غیر مقلد ،کم عقل۔ مجھے کہتا ہے:یہ جو تمہارے ہاں جنازہ ہوتا ہے تو جنازے سے پہلے بھی کبھی کھڑے کھڑے مولانا صاحب کہتے ہیں بھئی نیت کرلو !چار تکبیر جنازہ ،ثناء واسطے اللہ تعالیٰ کے درود واسطے حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے، دعا واسطے اس میت کے ، منہ قبلہ کی طرف ، پیچھے اس امام کے اللہ اکبر۔ نیت کرو کہتے ہیں۔یہ کہاں لکھا ہے ؟
میں نے کہا بخاری شریف میں۔کہتاہے :بخاری میں کہاں لکھا ہے ؟ میں نے کہا :پہلی حدیث میں۔کہتا ہے: پہلی حدیث میں کہاں لکھا ہے ؟میں نے کہا
” إِنَّمَا الْأَعْمَالُ بِالنِّيَّاتِ “
)صحیح بخاری :رقم الحدیث:1(
اعمال کادارومدار نیت پر ہے۔
نیت کہنا اور نیت کرنا:
کہتاہے :ہمیں اس سے اختلاف نہیں ہے، یہ جو تم زبان سے کہتے ہو یہ کہاں لکھا ہے؟ میں نے کہا :ہم کہتے ہی نہیں ہیں۔ کہتا ہے؟کیا کہتے ہو؟ میں نے کہا : امام اعلان کرتا ہے نیت کرو ،یا کہتاہے نیت کہو۔ کیا کہتا ہے؟ [کہتا ہے نیت کرو۔ سامعین ]کہنا زبان سے ہو تا ہے اور کرنا دل سے ہو تاہے۔
میں نے کہا:ہم یہ تو نہیں کہتے کہ زبان سے کرو ،اگر ہم کہتے زبان سے کرو تو ہم سے پوچھتا۔ نہ ہم نے کہا ہےکرونہ ہم سے پوچھو ،انہوں نے کی ہےتو ان سے پو چھنا چاہیے یا ہم سے ؟[ان سے۔سامعین ] اب یہ بات کوئی مشکل تو نہیں ہے ناں ، لیکن بلاوجہ بات پر بات کوئی نہ کوئی ایسی بات نکالتے ہیں کہ لوگ سمجھیں یہ بہت بڑا محقق ہے۔
مرکز اہل السنت والجماعت نعمتِ خداوندی ہے:
آپ نے عوام پر اعتراض کیا ہے۔ وہاں نہیں آتے جہاں سے جواب ملتے ہیں ،وہاں حملے کریں گے جہاں سے جواب ملتے نہیں اور فتنہ پھیلانا بہت آسان ہو تا ہے۔ میں کبھی یہ بات کہتا ہوں کہ سرگودھا والو تم اس نعمت کی قدر کرو جب نعمت چھن جاتی ہے تو پھر بندے کو سمجھ آتی ہے ہمارے ساتھ ہوا کیا ہے۔ یہ اللہ تعالیٰ کا نظام ہے دنیا میں ،دنیا بھر میں کئی سوالات ہوتے ہیں ناں اللہ تعالیٰ کاشکر ہے جواب کیلئے لوگ سرگودھا آتے ہیں۔
ابھی 70 لڑکے تین دن سے آئے پورے ملک سے آئے بیٹھے ہیں کہ ہم نے مسائل سیکھنے ہیں، ہم نے دلائل سیکھنے ہیں اور اس پر ہم اللہ تعالیٰ کا جتنا شکر کریں کم ہے اللہ تعالیٰ آپ کےاس فیض کوعام فرمائے۔ اس میں سب حضرات شامل ہیں کسی ایک فرد کی محنت تو نہیں ہوئی۔
تبلیغی جماعت میں ضرور وقت لگائیں:
خیر میں بتارہاتھا اس آیت میں اللہ تعالیٰ نے پہلے فرمایاوضواور اگر وضو نہ کرسکو پھر تیمم کا طریقہ بتادیا اگر نہ آئے تو اس کے لئے میرا آپ سے مشورہ ہے کم ازکم تین دن تبلیغی جماعت کے ساتھ لگائیں اس کے لگانے سے چلو تیمم کرنا توآجائے گا۔ہمیں تیمم کرنا بھی نہیں آتا ،اللہ کی قسم استنجاء کرنا نہیں آتا ،سونے کی دعائیں نہیں آتی اور اعتراض ان کے اوپر کرتے ہیں۔آسی کوئی کافر آں،[ہم کوئی کافر ہیں] ہندوؤں کے پاس جاؤ۔ اچھا دعا سناؤ؟دعا کوئی فرض ہے۔ اچھاپھر کریں گے کیا؟ اس لئے میں آپ سے گزارش کرتا ہوں تھوڑا تھوڑا وقت لگاتے رہا کریں اس سے بہت فرق پڑتا ہے۔
مسئلہ نور وبشر:
”قَدْ جَاءَكُمْ مِنَ اللَّهِ نُورٌ وَكِتَابٌ مُبِينٌ“
اس آیت کو اختلافی مسئلے پر آج کے دور میں بڑے شدومد سے پیش کیا جاتا ہے آیت کیا ہے ؟ اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں: تمہارے پاس نور بھی آیا ہے اور واضح کتاب بھی آئی ہے۔ پھر یہاں بحث چل پڑتی ہے کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نور ہیں یا بشر ہیں حالانکہ یہ بحث فضول ہے کہ نور ہیں یابشر۔
ذات نبوت اور وصف نبوت:
آسان بات کیا ہے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی ایک ذات ہے اور دوسرا ہے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا وصف۔ نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات کو بشر کہتے ہیں اور نبی کے وصف کو نور کہتے ہیں ، ذات کے اعتبار سے بشر ہیں اوصاف کے اعتبار سے نور ہیں۔ اس لیے ہم نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم کو بشر بھی مانتے ہیں اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو نور بھی مانتے ہیں۔ اب بتاؤ کوئی الجھن رہ جاتی ہے ؟[نہیں۔ سامعین] بلاوجہ اس مسئلے کو چھیڑ کر امت کو لڑا نا اور پھر کفر کے فتوے جاری کرنے اور امت کو ٹکڑوں میں تقسیم کردینا کس قدر ظلم کی بات ہے۔
وصف نبوت کے نور ہونے کی دلیل :
نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات بشر ہے اور وصف کے اعتبار سے نور ہیں اور یہ آیت اس بات کی دلیل ہے کہ پیغمبر نور ہیں وصف کے اعتبار سے کیوں ؟ آگے ہے ”يَهْدِي بِهِ اللَّهُ“یہ ایسا نور ہے جس کے ذریعے اللہ تعالیٰ تمہیں ہدایت دیتا ہے۔ تو نور ہدایت وصف کو کہتے ہیں۔ ” يَهْدِي بِهِ “ بتارہا ہے کہ یہ وصف ہے۔
قائد جمعیت کا ”لاجواب “جواب:
اسلام آباد میں قائد جمعیت مولانا فضل الرحمان صاحب دامت برکاتہم نے مجھے بلایا کسی خاص مشاورت کے لئے وہاں ایسے بات چل پڑی تو چلتے چلتے مجھے مولانا نے لطیفے کے طورپر ایک بات سنادی۔
مولانا فرمانے لگے: میں قاسم العلوم ملتان میں مدرس تھا،کتابیں پڑھا تا تھاتومیرے پاس پانچ سات لڑکے آگئے انہوں نے کہا :جی ہم نے ایک مسئلہ پوچھنا ہے۔ میں نے کہا :جی پوچھو۔ تو انہوں نے مسئلہ پوچھا کہ نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم نور ہیں یا بشر؟ مولانا فرماتے ہیں :میں نے ان سے کہا تمہارا سوال ہی غلط ہے ،پہلے سوال ٹھیک کرو پھر جواب دوں گا۔
انہوں نے کہا :جی سوال کیا ہے؟ مولانا نے فرمایا: نور کے مقابلے میں ظلمت آتی ہے تم پوچھوکہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نور ہیں یا ظلمت ہیں ؟تو پھر میں جواب دوں گاکہ کیا ہیں۔ نور اور بشر کا توآپس میں ٹکراؤ ہی نہیں۔ ایک بندہ بشربھی ہو سکتا ہے اور صفت کے اعتبار سے نور بھی ہو سکتا ہے۔ ان دونوں میں کیا ٹکراؤ ہے ؟ ٹکراؤپیدا کرو گے تو پھر ٹکراؤ بنےگا ورنہ ٹکراؤ بنتا ہی نہیں۔
قوم موسیٰ کی بے وفائی:
”قَالُوا يَا مُوسَى إِنَّا لَنْ نَدْخُلَهَا أَبَدًا مَا دَامُوا فِيهَا فَاذْهَبْ أَنْتَ وَرَبُّكَ فَقَاتِلَا إِنَّا هَاهُنَا قَاعِدُونَ“
یہ آیت میں صرف ایک نکتہ یا صحابہ رضوان اللہ عنہم اجمعین کی شجاعت بتانے کے لیے اس آیت کوپڑھا ہے۔ اس کا لمبا واقعہ ہے حضرت موسیٰ علیہ السلام کی قوم کو جب اللہ تعا لیٰ نے فرعون سے نجات دی،دریا سے کر اس کر گئے تو اللہ رب العزت نے موسیٰ علیہ السلام پر وحی بھیجی اپنی اس قوم کو لے کر چلو۔ کئی اقوال ہیں ایک قول یہ ہے کہ شام کوبیت المقدس میں اس قوم کو لیکرجاؤ، تم جہاد کرو اللہ تعالیٰ تمہیں فتح عطافرمادے گا۔
حضرت موسیٰ علیہ السلام کے بارہ قبیلے تھے اپنی قوم کے بارہ قبیلوں کے بارہ سرداروں کو بھیجا کہ جاؤآگے جاکر ان سے مذاکرات کرو تو اچھا یا ان کے حالات معلوم کرکے آؤکدھر فوج کھڑی ہے۔ یہ جب گئے آگے ایک قوم کھڑی تھی قوم عمالقہ انہوں نے انہیں گرفتار کیا ، گرفتار کرنے کے بعد انہوں نے کہا کہ ان بارہ کو قتل کردو۔ بادشاہ سمجھ دار تھا اس نے کہا انہیں قتل نہ کرو بلکہ انہیں شان وشوکت اور اپنی طاقت دکھاؤ ان کے قد بھی بڑے تھے ،دولت بھی تھی اور مضبوط بھی تھے۔ ان کو اپنی طاقت دکھائی جب وہ واپس آئے تو ڈر گئے۔ پہلےموسیٰ علیہ السلام کو ملے تو موسیٰ علیہ السلام نے فرمایا یہ بات جا کے عوام کو نہ بتانا عوام میں رعب پڑ جائے گا ،تم کہو جی ہم ہو کے آگئے ہیں ،بسم اللہ پڑھ کر جہاد کی تیاری کرو۔
ان میں سے دونے نہیں بات بتائی ان میں سے ایک کا نام ”قالب“ اور دوسرے کا نام ”یوشع بن نون“انہوں نہیں بتائی،باقی دس نے جاکر بتادیا اور قوم میں بزدلی پھیل گئی۔ حضرت موسیٰ علیہ السلام نے کہا جہاد کے لیےچلوتو قوم نے کہا:
”فَاذْهَبْ أَنْتَ وَرَبُّكَ فَقَاتِلَا إِنَّا هَاهُنَا قَاعِدُونَ“
)سورۃ المائدہ:24(
اے موسیٰ تم جاؤ اور تمہارا خدا جائے ،آسی ایتھے ہی بیٹھے ہیں [ہم ادھر ہی بیٹھے ہیں]فتح کر کے واپس آئو توپھر جائیں گے ،آسی نہیں جاندے[ہم نہیں جاتے] وہ یہاں بیٹھ گئے موسیٰ علیہ السلام کو تو اللہ تعالیٰ کی طرف سے وحی تھی۔
بزدل قوم پر عذاب خداوندی :
اللہ نے پھر عذاب نازل کیا۔
قَالَ فَإِنَّهَا مُحَرَّمَةٌ عَلَيْهِمْ أَرْبَعِينَ سَنَةً يَتِيهُونَ فِي الْأَرْضِ۔
)سورۃ المائدہ:26(
اللہ تعا لیٰ نے ان کے اوپر یہ سزا مسلط کیا کہ یہ جس میدان کے اندر تھے وہ 90 میل لمبا تھا اور 25 یا 40 میل چوڑا تھا اللہ تعالیٰ نے فرمایا کہ اب یہ اسی کے اندر چالیس سال تک رہیں گے ،صبح سے لےکر شام تک چلتے تو پھر جب رات کو سوتے توصبح وہی جگہ ہوتی جہاں سے چلےتھے۔
وجودِ نبوت کی برکات:
چالیس سال تک وہاں ٹھہرے رہے اور اللہ تعالیٰ کا کرم دیکھو چونکہ موسیٰ علیہ السلام اور ہارون علیہ السلام یہ دونوں ان کے اندر موجود تھے اللہ تعالیٰ نے اس کی نعمت بھی عطا فرمائی کہ ان کے بدن پہ جتنے کپڑے تھے نہ وہ پھٹتے نہ وہ میلے ہوتے ،یہ دو نبیوں کی برکت تھی۔
اسی طرح جب یہ چلتے دھوپ ہوتی تو موسیٰ علیہ السلام نے دعا فرمائی تو ان کی دعا کی برکت سے اوپر بادل چلتا سایہ بھی دے دیا اور جب یہ ایک قسم کا کھانا کھانے سے تنگ آگئے تو اللہ تعالیٰ نے ان کے اوپر من وسلویٰ دو قسم کی نعمتیں عطا فرمادیں۔ بٹیر نما جانور تھا اور سلویٰ میٹھی رطوبت تھی ،یہ اللہ تعالیٰ نے ان کو نعمت عطا فرمادی۔ کھاتے بھی تھے یعنی اس قدر نافرمانی کے باوجود بھی چونکہ اللہ کےدو نبی ان میں موجود تھے تو نبی کی برکات کا ظہور پھر بھی ہوتا تھا۔ نبی کا وجود اتنا مقدس ہوتا ہے کہ پھر بھی ان کو خیروبرکت ملتی ہے۔
اصحاب محمد رضی اللہ عنہم کی وفاداری:
محدثین نے لکھا ہے ،اصحابِ سیر نے لکھا ہے کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے جب صحابہ سے مشورہ کیا اب بتاؤ کیا کریں؟یہ میدان بدر ہمارے سامنے آگیا کریں کیا ؟حضرت مقداد بن اسود رضی اللہ عنہ کھڑے ہوئے انہوں نے کہا یا رسول اللہ ہم موسیٰ علیہ السلام کی قوم نہیں ہیں جو آپ کو یہ کہہ دیں
”فَاذْهَبْ أَنْتَ وَرَبُّكَ فَقَاتِلَا إِنَّا هَاهُنَا قَاعِدُونَ“
)سورۃ المائدہ:24(
اللہ کی قسم ہم سمندر میں چھلانگیں لگادیں اگر آپ فرمادیں ہم موسیٰ علیہ السلام کی قوم نہیں ہیں جو کہیں آپ جاکر جہاد کریں بلکہ ہم آپ کے ساتھ ہیں۔ تو نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم خوشی سے کھل اٹھے۔
فرمایا :کون اٹھے گا؟سیدنا ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ اٹھے۔ فرمایا: کون؟ حضرت عمر رضی اللہ عنہ اٹھے۔پھر بھی خاموش فرمایا :اور کون ہے؟ حضرت سعد رضی اللہ عنہ جب اٹھے تو حضور صلی اللہ علیہ وسلم بہت خوش ہوئے۔
انصار مدینہ بھی جانثار تھے:
حضور صلی اللہ علیہ وسلم ان کے اٹھنے سے خوش کیوں نہیں ہوئے؟ فرمایا : یہ تو مکہ سے میرے ساتھ چلے ہیں۔ یہ تو، ہیں ہی اس کام کیلئے ،میری خواہش تھی کہ مدینے کے لوگ کھڑے ہوں اور جب مدینہ کے کھڑے ہوئے تو حضور صلی اللہ علیہ وسلم خوش ہوگئے۔
غزوۂِ بدر …تاریخ اسلام کی پہلی جنگ:
کہ اب مکہ اور مدینے کے جانثار میرے ساتھ ہیں پھر 313 کو لے کر گئے ہیں، وہ جو تاریخ اسلام کی پہلی جنگ ہے جس نے پوری دنیا کے نقشے بدل کے رکھ دیے تو مقداد بن اسود رضی اللہ عنہ نے کہا ہم موسیٰ علیہ السلام کی قوم نہیں ہیں کہ
”فَاذْهَبْ أَنْتَ وَرَبُّكَ فَقَاتِلَا إِنَّا هَاهُنَا قَاعِدُونَ“
)سورۃ المائدہ:24(
کہہ کے آپ کا ساتھ چھوڑ دیں۔
قوم موسیٰ نافرمان تھی کافر نہیں :
حکیم الامت مولانا اشرف علی تھانوی رحمہ اللہ نے عجیب بات فرمائی ہے۔ فرمایا :جب یہ کہا :کہ تو جا اور تیرا خدا جائے توبظاہر تو یہ جملہ کفر والا ہے وہ تو کافر ہو گئے تھے تو موسیٰ علیہ السلام دعائیں مانگ رہے ہیں ان کیلئے ، سائبان کیلئے بادل آگئے ان پر ان کو اللہ تعالیٰ کھانے کیلئے دے۔اچھا ان کو پانی نہیں ملتاتھا تو موسیٰ علیہ السلام نے پتھر پر عصا مارا اس سے بارہ چشمے نکلے اور بارہ قبیلے اس سے پانی پی رہے ہیں تو یہ کافر تھے ہلاکت کی بددعا کرنی چاہیےتھی اور ان کو پھر بھی نعمتیں مل رہی ہیں۔ حضرت تھانوی رحمہ اللہ فرماتے ہیں کہ اسےکفر نہیں کہتے۔ کیوں؟ نافرمانی کی لیکن کفر نہیں ہے ان کا مطلب یہ تھا
”فَاذْهَبْ أَنْتَ وَرَبُّكَ“
اے موسیٰ تو جا اور تیرا خدا تیری مدد کرے گا تو جہاد کر خدا کی مدد سے ، فتح ہو گی تو ہم تیرے ساتھ ہیں۔ حکیم الامت تھا نوی رحمہ اللہ کی تاویل دیکھیں فرمایا کافر پھر بھی نہیں بنتے ،جب جائز تاویل موجود ہو کسی کا ایمان بچانے کے لیے تو ایمان بچایا کرو کفر میں مت دھکیلا کرو۔
نسل انسانی کی ابتداء:
”وَاتْلُ عَلَيْهِمْ نَبَأَ ابْنَيْ آدَمَ بِالْحَقِّ إِذْ قَرَّبَا قُرْبَانًا فَتُقُبِّلَ مِنْ أَحَدِهِمَا وَلَمْ يُتَقَبَّلْ مِنَ الْآخَرِ قَالَ لَأَقْتُلَنَّكَ قَالَ إِنَّمَا يَتَقَبَّلُ اللَّهُ مِنَ الْمُتَّقِينَ“
حضرت آدم علیہ السلام پہلے مرد ہیں ،اماں حوا پہلی عورت ہے۔ اب آگے نسل انسانی نے چلنا تھا جس کی نکاح کے بغیر کوئی صورت نہیں تھی اس کی صورت یہ ہوتی آدم اورحوا ماں باپ تھے ان کے حمل سے ایک بیٹی اور ایک بیٹا پیدا ہوتا ،یعنی جوڑے پیدا ہوتے اکیلا بچہ پیدا نہیں ہوتاتھا ،جب بھی ہوتا جوڑا ہوتا۔
نکاح کا طریقہ:
ان کا نکاح یوں ہوتا کہ پہلے حمل والا بیٹا اور دوسرے حمل والی بیٹی، پہلی حمل والی بیٹی اور دوسرے حمل والا بیٹا اس طرح نکاح ہوتا تھا۔اور حضرت آدم علیہ السلام کو پہلا بیٹا جو پیداہوا اس کا نام تھا قابیل اور ساتھ اس کے بہن بھی پیدا ہوئی اور دوسرے حمل سے جوپیدا ہوئے اس لڑکے کا نام تھا ہابیل اور ساتھ بہن پیدا ہوئی۔
ہابیل و قابیل کا واقعہ:
مفتی اعظم پاکستان مفتی محمد شفیع رحمہ اللہ لکھتے ہیں: قابیل کے ساتھ جو لڑکی پیدا ہوئی وہ بہت خوبصورت تھی اور ہابیل کے ساتھ جو پیدا ہوئی وہ بہت بد صورت تھی۔ اب قابیل کہنے لگا :جو میرے ساتھ پیدا ہوئی ہے میں اس کے ساتھ نکاح کروں گا ،حالانکہ اس کے ساتھ اس کا نکاح بنتا نہیں تھا،نکاح تو ہونا تھا دوسرے حمل والی لڑکی کےسا تھ۔ اس نے کہا: میں کروں گا۔ آدم علیہ السلام نے سمجھا یا بیٹا اس کے ساتھ تیرا نکاح جائز نہیں ہے،یہ نہیں ہوسکتا۔ تو اس نے کہا :میں کروں گا۔آدم علیہ السلام کے چونکہ علم میں تھا کہ اس سے نکاح ہو سکتا ہی نہیں ہے اور یہ بھی علم میں تھا کہ اگر یہ قربانی دیں گے تو ہابیل سچا ہےاس کی قربانی قبول ہو جائے گی۔ تو حضرت آدم علیہ السلام نے فرمایا:چلو ایسا کرو تم دونوں قربانی دو، جس کی قربانی اللہ تعالیٰ قبول کرے گا اس کی شا دی اس لڑکی سے کردیں گے۔آپ کے ذہن میں آئےکہ ہوسکتا ہے ہابیل کی قبول ہوجاتی ،یہ نہیں ہو سکتا، کیونکہ وہ تھا ہی غلط کام قبول کیسے ہوتی۔
حضرت آدم علیہ السلام کی تدبیر:
حضرت آدم علیہ السلام نے ایسی تدبیر اختیار کی کہ جس سے اپنے بیٹے کو سمجھانا بہت آسان ہوجائے۔ اب دونوں نے قربانی دے دی۔ اس وقت قربانی کےقبول ہونے کی علامت یہ ہوتی تھی ، اگرجانور قربانی کرو تو بھی میدان میں رکھ دو اگر آپ کچھ غلہ دینے چاہتے ہیں وہ بھی رکھ دو ،قربانی کو کھانے کی اجازت نہیں ہوتی تھی، جومال صدقہ کریں اس کو رکھ دیں آسمان سے آگ آتی اور آگ اس قربانی اور صدقہ کو کھا جاتی یہ اس بات کی علامت تھی کہ قربانی قبول ہوگئی اوراگر نہ کھاتی تو یہ علامت تھی کہ قربانی قبول نہیں ہوئی۔
اب قابیل اور ہابیل دونوں نے قربانی کی۔ ہابیل نےغالبا جانور ذبح کیا اور قربان کردیا اور قابیل نے گندم وغیرہ اور جو چیزیں تھی وہ رکھیں،قابیل کی قربانی قبول نہیں ہوئی اور ہابیل کی قربانی خدا نے قبول کرلی۔
تاریخ آدمیت کا پہلا قتل:
آدم علیہ السلام نے فر مایا :بیٹا دیکھو سیدھی سی بات ہے تیرا حق نہیں بنتا ان کا بنتا ہے۔قابیل حسد کی آگ میں جلا حالانکہ خوش ہونا چاہیے تھا ہابیل سے کہا میں تجھے قتل کردوں گا۔ ہابیل نے کہا :میں کچھ نہیں کہوں گا،میں قتل ہوناتو برداشت کرلوں گا لیکن اپنے بھائی پر ہاتھ نہیں اٹھا ؤں گا،باقی میرا کیا قصور ہے بھا ئی خدانے میری قربانی قبول کرلی ہے تیری قربانی قبول نہیں کی میرا تو کوئی قصور نہیں ہے۔
بعد از قتل تدفین کا مسئلہ:
قا بیل نےہابیل کو قتل کردیا،جب قتل کرلیا تو پریشان پھرتاتھا میں اس کو کہاں دفن کروں؟قرآن کریم میں ہے
” فَبَعَثَ اللَّهُ غُرَابًا يَبْحَثُ فِي الْأَرْضِ“
)سورۃ المائدہ:31(
اللہ تعالیٰ نے ایک کوا بھیجا اس نےکوے کو دیکھا کہ ساتھ ایک کوا مرا ہوا تھا وہ اسے دفن کرنا چاہ رہاتھا،وہ اپنی چونچ سے مٹی کوکھودنے لگا ،اس نے دیکھا تو پتہ چلا مردے کو یہاں دفن کرناہے۔
خیر و شر کی ابتداء اور اجر:
خیر میں صرف اتنا بتارہاتھا اب قیامت تک جتنے قتل کے گناہ ہوں گے یہ سارےقابیل کے سرپرہیں ،چونکہ پہلا قتل اس نے کیا تھا سارے قتلوں کاگناہ اس کو ملے گا۔
حدیث مبارک میں ہے
”من سن في الإسلام سنة حسنة فله أجرها وأجر من عمل بها بعده من غير أن ينقص من أجورهم شيء ومن سن في الإسلام سنة سيئة كان عليه وزرها ووزر من عمل بها من بعده من غير أن ينقص من أوزارهم شيء“
)صحیح مسلم:باب الحث علی الصدقۃ ولو بشق تمرۃ(
جو نیک کام شروع کرلے اس کااجر اسے بھی ملتا ہے اور بعد کے سارے نیک اعمال کا اجر اسے ملتا ہے ،اورجو برے کام کو شروع کرے اس کاگناہ اس کو ملتا ہے اور جو لوگ اس برائی پر عمل کریں ان سب کا گناہ اس کے نامہ اعمال میں لکھ دیا جاتا ہے۔
قبر کسے کہتے ہیں ؟
رئیس المناظرین ،حجۃاللہ فی الارض حضرت مولانا محمدامین اوکاڑوی رحمہ اللہ فرماتےتھے: کوے کو پتہ تھا کہ قبر کسے کہتے ہیں؟آج کے دوستوں کو یہ نہیں پتہ کہ قبرکسےکہتے ہیں؟ کوے کو پتہ تھا کہ یہ قبر ہےجہاں مردہ دفن کرنا ہے، ہمارے دوست کہتے ہیں یہ قبر نہیں ہے ،قبر وہ علیین میں ہے جہاں پر روح ہوتی ہے۔
حضرت فرماتے :جب ہم ان کیلئے دعا کرتے ہیں خدا تمہیں قبر ہی نصیب نہ کریں توکہتے ہیں ہمیں بددعائیں دیتا ہے۔ بھئی جب اس کو قبر مانتے ہی نہیں ہو تو تمہیں نصیب ہونے کی ضرورت ہی کیا ہے؟ جو مانتا ہے اسے نصیب ہونی چاہئے۔
مسائل زمینی قبر کےاور :………
پھر عجیب بات یہ ہےکہ مسجد میں مسئلہ بیان کریں گے کہ قبر کو سجدہ کرنا حرام ہے۔اب بتاؤ؟وہ لوگ کبھی علیین میں گئے ہیں سجدہ کرنے کیلئے [نہیں۔ سامعین] کسے سجدہ کرتےہیں؟[اس قبر کو] کس کو کہتا ہے کہ قبر ایک پائی سے اوپر نہیں ہو نی چاہیے،یہ کون سی قبر ہے؟ اسی مٹی والی۔ قبر کاطواف نہیں کرناچاہیے۔ وہ کون سی قبر ہے؟ قبر کو پکا نہیں بنانا چاہیے۔ وہ کون سی قبر ہے؟ یہی قبر ہے۔ سارے جب مسئلے بتائیں گے اسی قبرکے اور جب قبر کا مسئلہ آئے گا کہ قبر کے اندر مردہ کہاں پر ہے؟ پھر کہتے ہیں :ایک قبر نہیں ہے،قبر اوتے وے یا تھلے وے [قبراوپر بھی ہے نیچے بھی ہے] علیین میں یا سجین میں ہے۔ کوے کو بات سمجھ آگئی تھی، ہمیں سمجھ نہیں آرہی۔
وسیلہ دے کر دعا کرنا:
”يٰاَيُّهَاالَّذِينَ آمَنُوااتَّقُوْااللَّهَ وَابْتَغُواإِلَيْهِ الْوَسِيلَةَ وَجَاهِدُوا فِي سَبِيلِهِ لَعَلَّكُمْ تُفْلِحُونَ “
مفتی اعظم پاکستان مفتی محمد شفیع رحمہ اللہ لکھتے ہیں:وسیلہ کا ایک معنی یہ ہے کہ ایک مقام ہے میدان حشر میں جو اللہ تعا لیٰ نے ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے لئے بنایا ہے اور یہ دعا مانگنی چاہیے اللہ ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو مقام وسیلہ عطافرمائے یہ بھی ٹھیک ہے۔ اور فرمایا :وسیلہ کا ایک معنی یہ ہے کہ جس طرح نیک اعمال کے ذریعے خدا کا قرب ملتا ہے،اور نیک اعمال کاوسیلہ دے کر خدا سے مانگنا جائز ہے،اسی طرح انبیاء اورصلحاء کے قربت اور مجلس سے بھی خدا کا قرب ملتا ہے لہٰذاانکا وسیلہ بھی جائز ہے۔
حضرت عمر نے حضرت عباس کا وسیلہ دیا :
پھر حضرت نے وہاں پر دو حدیثیں نقل کی ہیں۔ایک حدیث حضرت عمر رضی اللہ عنہ والی، حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے حضرت عباس رضی اللہ عنہ کا وسیلہ دے کر خدا سے دعا مانگی اللہ تعا لیٰ نے ان کو بارش عطا فرما دی۔
نبی کریم کا وسیلہ دے کر دعا:
ایک صحابی آئے اوران کی بینائی کا مسئلہ تھا تو نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا یہ دعامانگا کرو یہ دعا اللہ تعالیٰ کے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے خود سکھائی ہے
”اللَّهُمَّ إِنِّي أَسْأَلُكَ وَأَتَوَجَّهُ إِلَيْكَ بِنَبِيِّكَ مُحَمَّدٍ نَبِيِّ الرَّحْمَةِ “
)سنن ترمذی:رقم3578(
اے اللہ! میں تجھے تیرے نبی حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کا وسیلہ دے کر دعا مانگتا ہوں،صحابی نے دعا مانگی توخدا نے اس کی دعا قبول فرمالی۔ تو دیکھو قرآن کریم کے اندر ہے اللہ تعالیٰ نے حکم کس کا دیا۔ ”يٰاَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا“اے ایمان والو! خدا سے ڈرا بھی کرو اوراللہ تعالیٰ تک پہنچنے کا وسیلہ تلاش بھی کیا کرو۔ تو جس طرح وسیلہ مقام کا نام ہے اسی طرح وسیلہ سے دعاکرنا ہمارا اہل السنت والجماعت کامسلک ہے۔
دین کا کام کرنے والوں کے لیے قرآنی ہدایات:
”يٰاَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا مَنْ يَرْتَدَّ مِنْكُمْ عَنْ دِينِهِ فَسَوْفَ يَأْتِي اللَّهُ بِقَوْمٍ يُحِبُّهُمْ وَيُحِبُّونَهُ أَذِلَّةٍ عَلَى الْمُؤْمِنِينَ أَعِزَّةٍ عَلَى الْكَافِرِينَ يُجَاهِدُونَ فِي سَبِيلِ اللَّهِ وَلَا يَخَافُونَ لَوْمَةَ لَائِمٍ ذَلِكَ فَضْلُ اللَّهِ يُؤْتِيهِ مَنْ يَشَاءُ وَاللَّهُ وَاسِعٌ عَلِيمٌ“
میں نے صرف چھوٹی سی بات سمجھانی ہے اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں: اگر کچھ لوگ مرتد ہو جائیں تو آپ فکر نہ کریں اللہ ان کی جگہ پر ایسی قوم پیدا کریگا جو دین کا کام کریں گے۔خدا کو تمھاری ضرورت نہیں تمہیں خدا کے دین کی ضرورت ہے۔ اس طرح اگر ہم دین کا کام کرتے ہیں تو اللہ کا ہمارے اوپر احسان ہے ہمارا خدا کے اوپر کوئی احسان نہیں ہے۔
مفتی شفیع صاحب رحمہ اللہ فرماتے ہیں: اللہ نے اس آیت میں جو دین کا کام کرے اس کی صفات بیان کی ہیں۔
1: ”بِقَوْمٍ يُحِبُّهُمْ وَيُحِبُّونَهُ “
اللہ ان سے پیار کرتا ہے وہ اللہ سے پیار کرتے ہیں۔
2: ”أَذِلَّةٍ عَلَى الْمُؤْمِنِينَ أَعِزَّةٍ عَلَى الْكَافِرِينَ“
مومنین کے ساتھ بہت پیار کرتے ہیں،اور کافروں پر سخت ہوتے ہیں۔
3: ”يُجَاهِدُونَ فِي سَبِيلِ اللَّهِ“
اللہ کے راستے میں جہاد کرتے ہیں۔
4: ”وَلَا يَخَافُونَ لَوْمَةَ لَائِمٍ “
یہ ملامت کی پرواہ نہیں کرتے۔
غیروں کی رکاوٹ اور اپنوں کے طعنے:
مفتی صاحب فرماتے ہیں: یہ بات کیوں کی ہے؟ جب بھی کوئی بندہ دینی تحریک لےکر اٹھتا ہے اس کے سامنے دو رکاوٹیں ہوتی ہے۔
(1)ایک رکاوٹ غیروں کی طرف سے ہوتی ہے۔
(2) دوسری رکاوٹ اپنوں کی طرف سے ہوتی ہے۔
مفتی شفیع رحمہ اللہ فرماتے ہیں: یہ غیروں کی رکاوٹ کا مقابلہ توبندہ کرسکتا ہے،اپنوں کے طعنوں کا مقابلہ نہیں کرسکتا۔ اللہ فرماتا ہے :جس سے خدا کام لیتا ہے اللہ اس کو توفیق عطا فرماتے ہیں کہ وہ اپنوں کےطعنوں کا مقابلہ بھی کرتاہے اور دین کے کام کو جاری رکھتا ہے۔ یہ اپنوں کا مقابلہ یعنی طعنے سہنا اور جواب نہ دینا۔ آپ نے کئی بار یہ شعر سنا ہے اور اس پر عمل کی بھی کوشش کریں۔

شہداء نے پکارا ہے تم کو فردوس کے بالاخانوں

سے

ہم راہ وفا میں کٹ آئے تمہیں پیار ابھی تک جانوں

سے

کچھ کانٹے بھی چبھ جاتے ہیں اس جذبہ گل بوسی

میں

اپنوں کے نشتر سہہ لینا ٹکرانا فقط بیگانوں سے

اپنوں سے نہ ٹکراؤ غیروں سے ٹکرا ؤ،اللہ دین کے کام کو بہت آسان فرما دیں گے۔
صدیق اکبر رضی اللہ عنہ کا واقعہ:
حضرت صدیق اکبر رضی اللہ تعالیٰ عنہ بیٹھے ہیں،ایک صحابی اور بیٹھے ہوئے تھے ، کسی مسئلہ پر یوں تکرار ہوئی ،صدیق اکبر رضی اللہ تعالیٰ عنہ بیٹھ کے سنتے رہے رسول صلی اللہ علیہ وسلم بیٹھ کے مسکراتے رہے تھوڑی دیر بعد صدیق اکبر رضی اللہ عنہ نے جواب دیا نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم کے چہرے پہ ناگواری کے آثار ظاہر ہوگئے، صدیق اکبر رضی اللہ عنہ نے عرض کیا: یارسول اللہ !وہ بول رہا تھا میں چپ تھا آپ مسکرارہے تھے میں نے جواب دیا آپ کے چہرے پہ ناگواری کے آثار ظا ہر ہوگئے ،رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم فرمانے لگے: جب تو خاموش تھا تو تیری طرف سے جواب دینے کیلئے اللہ نے فرشتہ مقرر کر رکھا تھا ،اب جب آپ خود جواب دینے لگے تو فرشتہ واپس چلا گیا مجھےتو ناگواری اس بات کی ہے جو کام فرشتہ کررہا تھا صدیق اکبر رضی اللہ عنہ نے کردیا۔
اہل حق کے خلاف منفی پروپیگنڈا:
اس لیےاپنوں کی باتیں برداشت کریں ہر بات کا جواب نہ دیا کریں ، لوگ جواب دینے کی کوشش کرتے ہیں جواب نہ دیا کریں۔ ابھی پچھلے دنوں میں اسلام آباد آگیا تو وہاں ایک دوست ہیں بہت اچھے،ان کے بیٹے مجھے کہنے لگے: مولانا صاحب ایک بار آپ ہمارے گھر آئے ہیں اور آپ نے درس قرآن دیا ہے۔
20 یا 25 بندے ہوں گے، کچھ مستورات ہوں گی ،ان کا تو مجھے پتہ نہیں۔ کہتا ہے :آپ درس دے کر گئے ہی تھے کہ اس کے بعد بہت سارے لوگ آ گئے۔ کہنے لگے:اس آدمی سے بچو، اس آدمی سے بچو۔کہتا ہے: میں نے بہت کوشش کی صفائی دینے کی لیکن میں بہت پریشان ہوا۔ میں نے کہا :آپ صفائی دیتے کیوں ہیں؟ مجھے کہتا ہے: پھر کیا کہیں؟ میں نے کہا :ان سے پوچھو کہ یہ مسئلہ ٹھیک بتاتا ہے یا غلط ؟ اپنے ہے ناں، وہ کہیں گے :مسئلہ ٹھیک بتاتا ہے۔اس سےکہو ہم صرف اس سے مسئلہ پوچھتے ہیں اور اس کے ساتھ کوئی تعاون نہیں کرتے۔ بس اب اس کا جواب دینے کی تمہیں کیا ضرورت؟جواب مت دو۔ اللہ اپنی طرف سے جواب کیلئے ملائکہ مقرر کردے گا۔ اللہ آپ سے بھی کام لیں اللہ مجھ سے بھی کام لیں۔
قسم کی اقسام اور احکام :
”لَا يُؤَاخِذُكُمُ اللَّهُ بِاللَّغْوِ فِي أَيْمَانِكُمْ وَلَكِنْ يُؤَاخِذُكُمْ بِمَا عَقَّدْتُمُ الْأَيْمَانَ فَكَفَّارَتُهُ إِطْعَامُ عَشَرَةِ مَسَاكِينَ مِنْ أَوْسَطِ مَا تُطْعِمُونَ أَهْلِيكُمْ أَوْ كِسْوَتُهُمْ أَوْ تَحْرِيرُ رَقَبَةٍ فَمَنْ لَمْ يَجِدْ فَصِيَامُ ثَلَاثَةِ أَيَّامٍ ذَلِكَ كَفَّارَةُ أَيْمَانِكُمْ إِذَا حَلَفْتُمْ وَاحْفَظُوا أَيْمَانَكُمْ كَذَلِكَ يُبَيِّنُ اللَّهُ لَكُمْ آيَاتِهِ لَعَلَّكُمْ تَشْكُرُونَ“
اس آیت میں اللہ نے قسم کا مسئلہ بیان فرمایا ہے۔ قسم کی تین قسمیں ہیں (1)یمین غموس (2)یمین لغو(3)یمین منعقدہ۔
یمین غموس:
یمین غموس کسے کہتے ہیں؟ایک کام آدمی نے نہ کیا ہو اور جھوٹ بول کر قسم اٹھائے کہ میں نے فلاں کام کیا ہے یا ایک آدمی نے کام کیا ہو اور جھوٹ بولے میں نے نہیں کیا ،یعنی گذشتہ کسی کام کے کرنے یا نہ کرنے پہ جھوٹی قسم اٹھا ئے اسے کہتے ہیں یمین غموس۔ غموس کا معنی ہوتا ہے ڈوب جانا یا ڈبودینا ،یہ گویا گناہ کے اندر ڈوب گیا ہے کہ اس نےجھوٹی قسم کیوں اٹھائی ہے؟
یمین لغو:
یمین لغو :اس کا معنی ہوتا ہے آدمی سمجھے میں نے کام کیا ہے لیکن درحقیقت نہ کیا ہو یا آدمی سمجھے کام نہیں کیا مگر درحقیقت کیا ہو اس پر قسم اٹھانے کو یمین لغو کہتے ہیں۔
یمین منعقدہ:
یمین منعقدہ وہ قسم ہے کہ آئندہ کسی کام کے کرنے یا نہ کرنے پر قسم اٹھائے اسے یمین منعقدہ کہتے ہیں۔
یمین غموس کا حکم :
اور تینوں کا حکم کیا ہے؟اگر کسی گذشتہ کام کے کرنے یا نہ کرنے پہ جان بوجھ کے جھوٹی قسم اٹھائی اسے یمین غموس کہتے ہیں ،اس میں گناہ تو ہوگا مگر اس میں کفارہ نہیں ہے صرف گناہ ہوگا۔
یمین لغو کا حکم :
یمین لغو:بالفرض میں ایک بات کہتا ہوں مثال کے طور پر کسی جگہ جانا تھا مگر نہیں جاسکا اور سمجھا کہ میں گیا ہوں تو کہتا ہے اللہ کی قسم میں تو گیا تھا وہ غلطی سے کہہ دیا اگر گزشتہ کسی کام کے کرنے یا نہ کرنے پر بھول کر قسم اٹھائی اسے یمین لغو کہتے ہیں اس پہ کفارہ بھی نہیں اور اس پہ گناہ بھی نہیں۔
یمین منعقدہ کا حکم:
ایک ہوتا ہے ؟ آئندہ کسی کام کےکرنے یا نہ کرنے پر قسم اٹھا ئے اگر اس قسم کو پورا نہیں کیا اس پر کفارہ ہوتا ہے۔ کفارہ کیا ہے؟ آدمی یا تو غلام آزاد کردے ،یا دس مسکینوں کو کھانا کھلا دے ،یادس کو کپڑے پہنادے یا پھر یہ کہ تین روزے رکھے اگر روزے تین رکھے تو مسلسل رکھنے پڑیں گے یہ نہیں کہ ایک آج ایک پرسوں ایک پھراگلے دن ،بلکہ مسلسل تین روزے رکھیں یہ قسم کا کفارہ ہے۔ آدمی کو کوشش کرنی چاہیے کہ قسم نہ اٹھائے اگر قسم اٹھا بھی لے تو اس قسم کو ہرحال میں پورا کرنا چاہیے۔
بلاوجہ مسائل پوچھنے کی ممانعت:
”يٰاَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا لَا تَسْأَلُوا عَنْ أَشْيَاءَ إِنْ تُبْدَ لَكُمْ تَسُؤْكُمْ وَإِنْ تَسْأَلُوا عَنْهَا حِينَ يُنَزَّلُ الْقُرْآنُ تُبْدَ لَكُمْ عَفَا اللَّهُ عَنْهَا وَاللَّهُ غَفُورٌ حَلِيمٌ“
اس آیت میں اللہ نے بات سمجھائی ہے کہ بلاوجہ فضول مسئلے نہ پوچھا کرو ،یہ بڑا اہم مسئلہ ہے۔ یہ واقعہ پیش آیا اس وقت جب نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم پر حج کی آیات نازل ہوئیں ،تو ایک صحابی نے پوچھا :یارسول اللہ؟ زندگی میں ایک بار حج ہے یا ہر سال فرض ہے۔رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم خاموش ہوگئے۔اس نے پھر پوچھا؟زندگی میں ایک بار حج ہے یا ہر سال۔ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم فرمانے لگے: اگر میں کہ دیتا ہرسال تو ہرسال فرض ہوجاتا توبتاؤ تم میں سے کون کرتا ؟اس پر قرآن کریم کی یہ آیت اتری
”يٰاَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا لَا تَسْأَلُوا عَنْ أَشْيَاءَ إِنْ تُبْدَ لَكُمْ تَسُؤْكُمْ“
اے ایمان والو ایسے مسئلے نہ پوچھو اگر بتادئیے جائیں تو بعد میں تمہیں ناگوار گزریں۔
خلاصہ یہ ہے کہ بلا ضرورت اور بلاوجہ مسئلے نہ پوچھا کریں۔
لچر اور فضول میسجز :
ہماری آج کمزوری چلی ہے کہ میسج پہ لوگ مسئلےپوچھتے ہیں ایک،دوسرا، تیسرا، چلتےجاتے ہیں جس کا وجودہی نہیں ہوتا اور مسئلے پوچھتے رہیں گے۔ کبھی تاریخی مسئلے ، اچھا یہ بتائیں کہ نوح علیہ السلام نے جو جانور اپنی کشتی میں بٹھائے تھے سب سے پہلا جانور کون سا تھا؟سب سے آخری جانور کون سا تھا ؟ میں وہ کہہ رہا ہوں جو مجھ سے پوچھے جاتے ہیں اب بتاؤ کیا اس کا جواب دوں؟
اچھا یہ بتا ئیں صبح کو پھانسی ہوتی ہے۔ یہ صبح صبح کیوں ہوتی ہے، شام کو کیوں نہیں ہوتی ؟ میں نے کہا : جی یہ جیل والوں سے پوچھو ہم پھانسی دیتے ہیں۔ یعنی میں آپ کو مسائل گنوانے شروع کروں نہ لوگ میسج پہ پوچھتے ہیں اور فون پہ تو میں کسی بھی ایسے مسئلے کا جواب نہیں دیتا۔
مسئلہ پوچھتے ہیں امی عائشہ کا جنازہ کس نے پڑھایا تھا ؟میں نے کہا :مجھے نہیں پتہ۔ کیسی بات کرتے ہیں؟ میں نے کہا : اور کیا کہوں کہ میں جھوٹ بول رہا ہوں؟ اچھا مجھے خواب آئی ہے تعبیر بتائیں؟ میں نے کہا :مجھے تعبیرنہیں آتی۔ پھر کیا کریں؟
مسائل پوچھیں پہیلیاں نہیں :
میں نے کہا: مسئلے پوچھو،حلال کیا ہے ؟حرام کیا ہے؟ جائز کیا ہے ؟ ناجائز کیا ہے؟ یہ مسائل نہیں پوچھتے پہیلیاں پوچھتے ہیں۔ اچھا کسی نہر سے ننگی عورت کی لاش مل گئی کیسے پتہ چلے گا مسلمان ہے ؟تعجب ہے کہ تمہیں عورت ہی کے مسئلے سوجھے۔ نہیں میں ہنسانے کے لئے نہیں کہہ رہاہوں بڑ ے افسوس کے ساتھ کہتا ہوں کہ یہ مسئلہ پوچھنے والا ہے جو پوچھ رہے ہیں۔ میسج چلتے چلے آرہے ہیں ہر مسئلے کا جواب نہ دیا کریں وہ مسئلہ پوچھیں جو ضرورت کے مطابق ہو میں نے اپنا معمول بنا رکھا ہے بلاضرورت اگر کوئی مسئلہ پوچھیں میں جواب دیتا ہی نہیں وہ مسئلہ پوچھیں جو آپ کی زندگی سے تعلق رکھتا ہے۔
آدمی کی خوبی کیا ہے ؟
رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : ایک آدمی کی خوبی یہ ہے ان باتوں کو چھوڑدے جو اس کو فائدہ نہیں دیتی۔
منکرین فقہ کی خیانت:
”وَإِذَا قِيلَ لَهُمْ تَعَالَوْا إِلَى مَا أَنْزَلَ اللَّهُ وَإِلَى الرَّسُولِ قَالُوا حَسْبُنَا مَا وَجَدْنَا عَلَيْهِ آبَاءَنَا أَوَلَوْ كَانَ آبَاؤُهُمْ لَا يَعْلَمُونَ شَيْئًا وَلَا يَهْتَدُونَ“
آیت کا خلاصہ کیا ہے؟ یہ جب مشرکین مکہ اور گذشتہ کفار کو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم یہ بات کہتے ،ہماری بات مانو ،اللہ کی بات مانو۔ وہ کہتے تھے:ہم تو باپ دادا کی بات مانیں گے،تمہاری خاطر باپ دادا کو چھوڑدیں،خاندان کو چھوڑدیں تمہاری خاطر ان سب کو چھوڑدیں۔ یہ آیت اتری مشرکین اور نبی کے مابین ،لیکن آج یہ آیت پیش کی جاتی ہے آپ کے خلاف اس لئے اس کا جواب اچھی طرح سمجھ لیں۔
آج کے دور میں آیت پیش کیا جاتی ہے آپ کے اور میرے خلاف۔ کیا کہتے ہیں؟یہ فقہ کو مانتے ہیں یہ بزرگوں کومانتے ہیں بزرگوں نے کہا بزرگوں سے سنا بزرگوں کو مانتے ہیں۔ کہتے ہیں: کہ یہ مشرکین کا کام ہے جبکہ مشرکین سے اللہ فرماتے
” وَإِذَا قِيلَ لَهُمْ تَعَالَوْا إِلَى مَا أَنْزَلَ اللَّهُ وَإِلَى الرَّسُولِ“مشرک کہتا: ”قَالُوا حَسْبُنَا مَا وَجَدْنَا عَلَيْهِ آبَاءَنَا“
)سورۃ المائدہ:104(
ہمیں اپنا باپ دادا کافی ہے،یہ تقلید کرنا مشرکین کا کام ہے۔
آیت کا موقع محل اورصحیح مطلب :
ہم نے کہا :کہ آپ نے آیت توپڑھی ہے مگر استعمال غلط جگہ کیا ہے۔ آدمی تھا کسی جماعت میں گیا تو اس بچارے نے دعا سیکھ لی۔ دعا کون سی سیکھ لی؟ کہ جب ناک میں پانی ڈالیں تو کون سی دعا پڑھیں؟
”اللهم أرحني رائحة الجنة ولا ترحني رائحة النار“
)تفسیر روح البیان،كنز العمال فی سنن الأقوال والأفعال رقم:26989(
اے اللہ! مجھے جنت کی خوشبو سونگھا دے اور جہنم کی بد بو سے بچالے۔
اب یہ چلا گیا اندر استنجے کیلئے وہاں ادھرسوچتا رہا کہ میں نے دعا سیکھی تھی تو کونسی ہے سوچتا رہا سوچتا رہا اس کو دعا تو یاد تھی اس نے پھر یہ دعا تھوڑی اونچی آواز سے پڑھ لی
”اللهم أرحني رائحة الجنة ولا ترحني رائحة النار“
باہر ایک بندہ کھڑا تھا اس نے کہا دعا ٹھیک ہے سوراخ ٹھیک نہیں ہے ،یہ دعا ٹھیک ہے مگر اس سوراخ کی لئے ٹھیک نہیں ہے۔ بات تو بالکل ٹھیک ہے اب دیکھو دعا اور تھی اور فٹ کہاں پر کردی ہے،آیت کہاں کی تھی اورفٹ ہمارے اوپر کی ہوئی ہے کہ تم امام ابو حنیفہ کو مانتے ہو امام شافعی کو مانتے ہو تو آیت مشرکین کے خلاف ہے اور فٹ کسی کے خلاف ہے؟ مومنین کے۔ آپ کو میری بات پہ تعجب تو ہوتا ہوگا لیکن اس سے زیادہ میں آپ کو سمجھانے کیلئے کیا مثال دوں۔
اگر آپ کو اشکال ہو نا تو میں اس اشکال کو صاف کرکے قرآن کریم کی آیت پڑھ دیتا ہوں تاکہ الجھن نہ ہو کہ مثال کیسی تھی؟ قرآن کریم نے مچھر مکھی کی مثال دی ہے۔ مشرکین کہتے: اللہ کا کلام اور مکھی اور مچھر کی مثالیں اللہ نے فرمایا
”إِنَّ اللَّهَ لَا يَسْتَحْيِي أَنْ يَضْرِبَ مَثَلًا مَا بَعُوضَةً فَمَا فَوْقَهَا“
)سورۃ البقرہ:26(
اللہ مکھی اور مچھروں کی مثالیں دے کر فرماتا تمہارے کفر کی حیثیت ہی مکھی اورمچھر کی طرح ہے اور کون سی مثالیں دے۔ تم کوایسے لوگوں کی مثالیں نہ دیں تو اورکون سی مثالیں دیں۔ کیا مثال میں اما م کعبہ پیش کریں؟ جواب سن لو اورجواب اسی آیت میں ہے۔
ادھوری بات ادھورا نتیجہ:
آپ کو یاد ہوگا میں نے کئی ایک بار ایک بات کی ہے آدھا قرآن پڑھو نتیجہ اور ہے پورا قرآن پڑھو نتیجہ اور ہے ایک حدیث پڑھو نتیجہ اور ہے دو حدیثیں پڑھو نتیجہ اورہے۔ پڑھو آگے جواب موجود ہے۔ اللہ فرماتے ہیں
”أَوَلَوْ كَانَ آبَاؤُهُمْ لَا يَعْلَمُونَ شَيْئًا وَلَا يَهْتَدُونَ“
)سورۃ المائدہ:104(
اگر باپ علم اورعمل والا نہ ہو تو پھر بھی باپ دادے کی بات مانو گے؟؟پتہ یہ چلا اگر باپ بےعلم اور بے عمل ہو اس باپ کی بات کو دین کے معاملے میں نہیں مانا جائےگا ،لیکن باب علم اور عمل والا ہو تو اس کی بات کو مانا جائےگا۔
امام ابو حنیفہ کی عبادت گزاری:
ہمارا امام اعظم ابوحنیفہ رحمہ اللہ اس کا علم دیکھو تو دنیا میں اس کی مثال نہیں اور اگر عمل دیکھو تو چالیس سال عشاء کے وضو سے فجر کی نماز پڑھی ہے نہ علم میں مثال ہے نہ عمل میں مثال ہے۔
امام ابوحنیفہ کا تقویٰ:
عمل میں اتنے بڑے آدمی تھے امام صاحب دیوار کے باہر دوپہر کو دھوپ میں کھڑے ہیں۔ اس و قت کسی نے پوچھا :امام صاحب کھڑے ہو کوئی کام ہے؟ فرمایا: جی ہاں۔ تو آپ دیوار کے سائے میں کھڑے ہوجا ئیں۔ فرمایا :سائے میں کھڑا نہیں ہوسکتا۔ اب امام صاحب کا تقوی دیکھنا !
پوچھا جی کیوں؟فرمایا :اس لئےکہ میں نے اس بندے سے پیسے لینے ہیں اور جس بندے سے پیسے لینے ہو اس سے نفع لینا سود بنتا ہے میں دھوپ میں کھڑا ہو جاؤں گا اس کی دیوار کے سائے میں کھڑا نہیں ہوں گا کہ سود کے اندر شامل نہ ہوجاؤں۔ لاؤ دنیا میں ایسے عمل والی مثال ؟
امام ابو حنیفہ کی احتیاط:
امام ابو حنیفہ رحمہ اللہ کو پتہ چلا کہ کوفہ میں کوئی بکری چوری ہوگئی ہے امام صاحب نے قصائی سے پوچھا فر مایا: یہ بتاو ایک بکری عام طور پر کتنے سال زندہ رہتی ہے؟ اس نے کہا: جی سات سال۔ امام ابوحنیفہ رحمہ اللہ نے سات سال تک بکری کا گوشت کھا نا چھوڑدیا کہ کہیں چوری کا گوشت نہ ہو۔ ایسا عمل والا دنیا سے تلاش کرکے لاؤ؟ ہمارے امام تو علم والے بھی ہیں عمل والے بھی ہیں۔ قرآن کریم ان کی بات ماننے سے منع نہیں کرتا ،بلکہ بے علم اور بے عملوں کی بات سے منع کرتا ہے۔ اللہ ہمیں علم والے اور عمل والےآباء واجداد عطا فرمائے۔
قیامت کا ہولناک منظر:
”يَوْمَ يَجْمَعُ اللَّهُ الرُّسُلَ فَيَقُولُ مَاذَا أُجِبْتُمْ قَالُوا لَا عِلْمَ لَنَا إِنَّكَ أَنْتَ عَلَّامُ الْغُيُوبِ“
قیامت کا منظر اتنا ہولناک ہوگا ،اللہ تعالیٰ انبیاءعلیہم الصلاۃ والسلام سے بھی پوچھیں گے تمہاری امت نے کیا جواب دیا ؟تو نبی بھی جواب نہیں دے گے، فرمائیں گے ”لَا عِلْمَ لَنَا“
تفصیلات کا تو ہمیں بھی نہیں پتہ،جتنا آپ کو پتہ ہے آپ ہی بہتر جانتے ہیں اس سے زیادہ ہمیں بھی پتہ نہیں۔ نبی بھی اس ہولناکی کی وجہ سے پریشان ہوں گے اس کے اور بھی بہت سارے معانی ہیں ، میں آخری بات کہتا ہوں۔ اللہ فرماتے ہیں
”إِنْ تُعَذِّبْهُمْ فَإِنَّهُمْ عِبَادُكَ وَإِنْ تَغْفِرْ لَهُمْ فَإِنَّكَ أَنْتَ الْعَزِيزُ الْحَكِيمُ“
)سورۃ المائدہ:118(
یہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام قیامت کے دن فرمائیں گے۔ عیسی علیہ السلام سے اللہ قیا مت کے دن پوچھیں گے اے عیسیٰ! تیری قوم نے مجھےچھوڑ کے تجھے خدا بنایا اورمریم کو خدا بنایا۔
”أَأَنْتَ قُلْتَ لِلنَّاسِ اتَّخِذُونِي وَأُمِّيَ إِلَهَيْنِ مِنْ دُونِ اللَّهِ“
)سورۃ المائدہ:116(
یہ تو نے کہا تھا؟حضرت عیسیٰ علیہ السلام جواب دیں گےیا اللہ! جب تک میں تھا میں نے تو کبھی نہیں کہا، بلکہ ان کی نگرانی بھی کی ہے۔
وفات عیسیٰ اور مرزائی دجل :
” فَلَمَّا تَوَفَّيْتَنِي کُنْتَ أَنْتَ الرَّقِيبَ عَلَيْهِمْ وَأَنْتَ عَلَى كُلِّ شَيْءٍ شَهِيدٌ“
)سورۃ المائدہ:117(
اللہ جب آپ نے مجھے موت دےدی۔ یہ کب سوال ہوگا؟[آخرت میں۔سامعین ]مرزائی کہتا ہے: دیکھو حضرت عیسیٰ علیہ السلام فرماتے ہیں مجھے وفات دی ،حالانکہ یہ سوال قیا مت کے دن ہوگااور قیامت سے پہلے تو حضرت عیسیٰ علیہ السلام کو وفات آجائے گی۔اس طرح باطل لوگ دھوکہ دیتے ہیں۔اللہ ہمیں ان سے محفوظ فرمائے۔[آمین۔سامعین] حضرت عیسیٰ فرمائیں گےاللہ آپ نے تو مجھے وفات دے دی میں تو آگیا تھا اب پیچھے کا معاملہ تو آپ کے علم میں ہے۔اس کے بعدحضرت عیسیٰ علیہ السلام ایک جملہ فرمائیں گے
”إِنْ تُعَذِّبْهُمْ فَإِنَّهُمْ عِبَادُكَ“
اے اللہ! تو عذاب دینا چاہے تو تیرے بندے ہیں
”وَإِنْ تَغْفِرْ لَهُمْ فَإِنَّكَ أَنْتَ الْعَزِيزُ الْحَكِيمُ“
اللہ اگر تو ان کو معاف کرنا چاہے تو،تو غالب بھی ہے حکمت والا بھی ہے۔ حضرت ابراہیم علیہ السلام نے اللہ سے دعا مانگی وہ اور تھی کیا فرمایا
”فَمَنْ تَبِعَنِي فَإِنَّهُ مِنِّي وَمَنْ عَصَانِي فَإِنَّكَ غَفُورٌ رَحِيمٌ“
)سورۃ ابراہیم:36(
اللہ جو میری بات مانے وہ تو میرا ہے اور جو میری نافرمانی بھی کرے تو اے اللہ تو غفور بھی ہے تو رحیم بھی ہے۔اورحضرت عیسیٰ علیہ السلام کیا فرمارہے ہیں؟ اللہ اگر تو عذاب دے دے تو تیرے بندے ہیں اور اگر بخش دے تو پھر ”فَإِنَّكَ أَنْتَ الْعَزِيزُ الْحَكِيمُ“ تو عزیز بھی ہے حکیم بھی ہے۔
دونوں نبیوں کے جملوں میں بنیادی فرق:
دو نوں نبیوں نے یہ فرق کیوں کیا؟
حضرت ابراہیم علیہ السلام کا جملہ دنیا کا ہے اور حضرت عیسیٰ علیہ السلام کا جملہ آخرت کا ہے۔ آخرت میں تو کافر کے لئے معافی کا قانون ہی نہیں ہے۔ حضرت ابراہیم علیہ السلام کیا عرض کر رہے ہیں۔ اےاللہ! اگر میری بات مانیں تو میرے ہیں،پھر تو آپ ان کو معاف کرینگے،اور اگر نافرمانی بھی کریں تو،تو غفور بھی ہے تو رحیم بھی ہے۔ کیامطلب ؟
مقام عدل اور رحمت:
یعنی اگر میری نافرمانی بھی کریں پھر بھی اپنی رحمت کے صدقے ان کو توبہ کی توفیق دے اور تو معاف کرسکتا ہے۔ کیونکہ یہ دنیا ہے۔ اور قیامت کے دن نہ تو بہ ہے اور نہ اس کے بعد کافر کےلئے رحمت ہےاس لیےحضرت عیسیٰ علیہ السلام کہتے ہیں اللہ اگر عذاب دے تو تیرے بندے ہیں۔ یہ مقام عدل ہے۔ اگر تو انہیں معاف کرنا چاہے یہ قانون تو نہیں ہے تو حکیم بھی ہے تو غالب بھی ہے۔
جنگ بدر کے قیدیوں کے بارے میں ……:
رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے یہ جملہ اپنے صحابہ کے بارے میں اس وقت فرمایا جب جنگ بدر ہوئی اور ستر قیدی مسلمانوں کی قید کے اندر آئے تو مشورہ چلا کیا کریں۔ حضرت صدیق اکبرسے پوچھا،پھرحضرت عمر رضی اللہ عنہ سے پوچھا آپ بتاؤ کیا کریں ؟حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے فرمایا: یہ عقیل حوالے کرو علی کے اور میرے رشتے دار میرے حوالے کرو،ہرکوئی اپنے اپنےرشتے دار کی گردن اڑادے۔
حضور! یہ کفر کے سرغنے ہیں آج ہمارے قابو میں آگئے ہیں نہیں چھوڑنا ان کی گردنیں اڑادو۔ اچھا صدیق آپ بتاؤآپ کیا کہتے ہو؟حضرت صدیق اکبر نے فرمایا:جیسے بھی ہیں حضور ہیں تو آپ کے ہی ناں۔حضور میرا مشورہ یہ ہے کہ ان سے فدیہ لیکر آزاد کردو ان کو قتل نہ کریں ہوسکتا ہے کل کو مسلمان بنیں اور ہمارے معاون بنیں اور دین کا فائدہ ہو جائے۔اب حضرت عمر رضی اللہ عنہ دینی حمیت پر بات کرتے ہیں ،صدیق بھی دین کے فائدے کی بات کرتے ہیں۔
مزاج صدیقی و فاروقی:
اس موقع پر رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے دونوں صحابہ کے مزاج کا جوتوازن بیان کیا ہےوہ بڑا عجیب ہے۔ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم فرمانے لگے میرے صدیق کی مثال ایسے ہے جیسے ابراہیم اور عیسیٰ ہیں اور میرے عمر کی مثال ایسے ہےجیسے موسیٰ اور نوح ہیں۔اگر ان کا مزاج دیکھنا چاہو تو گذشتہ انبیاء کو دیکھو نوح نے کیا عرض کیا تھا
رَبِّ لَا تَذَرْ عَلَى الْأَرْضِ مِنَ الْكَافِرِينَ دَيَّارًا؀ إِنَّكَ إِنْ تَذَرْهُمْ يُضِلُّوا عِبَادَكَ وَلَا يَلِدُوا إِلَّا فَاجِرًا كَفَّارًا؀
)سورۃ نوح:26،27(
اللہ ان کو برباد کردے اگر یہ رہ گئے تو ان کی نسلیں پھر کافر پیدا ہوں گی ختم کردے ان کو اور موسی نے کیا دعا مانگی
” رَبَّنَا اطْمِسْ عَلَى أَمْوَالِهِمْ وَاشْدُدْ عَلَى قُلُوبِهِمْ“
)سورۃ یونس:28(
اے اللہ ان کے مالوں کو بھی ختم فرمادے ان کے دلوں پر بھی مہر لگادے، اللہ یہ کفر پہ مریں ان کو عذاب دے دے حضرت موسیٰ اور حضرت نوح کیسے جلال میں تھے۔ اور حضرت ابراہیم کیا کہتے ہیں
فَمَنْ تَبِعَنِي فَإِنَّهُ مِنِّي وَمَنْ عَصَانِي فَإِنَّكَ غَفُورٌ رَحِيمٌ
)سورۃ ابراہیم:36(
حضرت عیسیٰ علیہ السلام کیا فرما رہے ہیں
”إِنْ تُعَذِّبْهُمْ فَإِنَّهُمْ عِبَادُكَ وَإِنْ تَغْفِرْ لَهُمْ فَإِنَّكَ أَنْتَ الْعَزِيزُ الْحَكِيمُ “
)سورۃ المائدہ:118(
میرے صدیق کو دیکھنا ہو تو ابراہیم اور عیسیٰ کی دیکھ لو، میرے عمر کو دیکھنا ہو تو حضرت موسیٰ اور نوح کو دیکھو۔ یہ صحابہ کی مثالیں گزشتہ انبیاء میں تھیں۔
جنت کے مستحق تو نہیں لیکن ……:
اور روایت میں ہے کہ نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم ایک دن رات کواٹھے اس آیت کو پڑھتے رہے اورعشاء سےلے کر فجر تک اسی ایک ہی آیت کو پڑھتے رہے
”إِنْ تُعَذِّبْهُمْ فَإِنَّهُمْ عِبَادُكَ وَإِنْ تَغْفِرْ لَهُمْ فَإِنَّكَ أَنْتَ الْعَزِيزُ الْحَكِيمُ“
)سورۃ المائدہ:118(
ہم بھی اللہ سے دعا ئیں مانگیں ہم یہ تو نہیں کہتے اے اللہ! تو عذاب دینا چاہے تو تیرے بندے ہیں۔ عدل کے تو ہم متحمل ہی نہیں ہم اللہ سے یہ ہی دعا مانگیں جو حکیم الامت حضرت تھانوی رحمہ اللہ مانگا کرتے تھے۔ اے اللہ! ہم اس لئے جنت تجھ سے نہیں مانگتےکہ ہم جنت کے مستحق ہیں اس لئے جنت مانگتے ہیں کہ ہم جہنم کو برداشت نہیں کرسکتے۔ اللہ مجھے بھی ہدایت عطا فرمائے اللہ آپ کو بھی ہدایت عطافرمائے ،اللہ تعالی ہم سب کو دین کی خدمت کیلئے قبول فرمالے،اللہ آپ کو بھی توفیق دے اور مجھے بھی توفیق دے [آمین۔سامعین]
وآخر دعوانا ان الحمد للہ رب العالمین
دعا :
اے اللہ! ہم سب کے گناہوں کو معاف فرمادے۔ اے اللہ !خطاؤں سے درگزر فرما۔ اے مولائے کریم ! جائز حاجات کو پورا فرما۔ اے اللہ! اس درس قرآن کے تسلسل کو برقرار فرما۔ اے اللہ !جتنے بھی حضرات آئے ہیں ان کا آنا قبول فرما۔ اے اللہ! جتنےبیمارہیں ان سب کو صحت عطافرما۔ اے اللہ! جتنے مقروض ہیں ان کے قرضے ادافرما۔ اے اللہ! جو اس دنیا سے جاچکے ہیں ان کی مغفرت فرما۔